پانی موت دیتا ہے
 یہ تو آپ نے سنا ہوگا کہ زندگی کا دارو مدار پانی پہ ہے ، لیکن میں نے کئی بار زندگی کے اس منبع کو موت بانٹتے ہوئے دیکھا ، پودے کو بڑھاتا بھی ہے ۔۔۔مٹاتا بھی ہے ۔ انسان کو بچاتا بھی پانی ہے اور سلاتا بھی پانی ہے ۔۔۔۔ یہ جسم کے اندر جائے تو سنوارتا ہے ۔۔۔ جسم اس کے اندر جائے تو بگاڑتا ہے ۔ یہ پانی کی کیا بات ہے ۔۔۔ ‌
 آہ بھی ہے واہ بھی ہے ۔۔۔ جب گرمی میں صحرا میں مل جائے تو واہ ہے ۔۔۔ جب دریا شہر میں آجائے تو آہ ہے ۔
 اگر مکان پانی کی وجہ سے بنتا ہے تو خراب بھی اسی کی وجہ سے ہوتا ہے ۔
 کپاس اگتی اسی کی وجہ سے ہے لیکن روئی پہ پڑجائے تو خراب ہوجاتی ہے ۔۔۔ !!
 گنا اگتا پانی کے ساتھ ہے لیکن گڑ پہ پڑجائے تو مٹا دیتا ہے ۔۔
 کشتی کو منزل پہ پہنچاتا بھی یہی ہے اور ڈبوتا بھی یہی ہے
میں نے ایک مرتبہ نمک سے کہا پانی زندگی دیتا ہے کہنے لگا دیتا ہوگا پر میں نہیں مانتا میں نے پوچھا کیوں ؟ کہنے لگا جب بھی میرے قریب آیا ہے کھور کے رکھ دیا ۔اور اسی قسم کی بات چینی ، کاربن ، رنگ، چونا وغیرہ نے بھی کی ۔
 آہ کیا ہے وہ اشیاء جو باعث حیات بھی ہیں اور وفات بھی ۔۔۔ ویسے ایک بات ہے آپ دریا کے پاس جاتے ہیں سمندر کے پاس جاتے ہیں‌جب وہ آپ کے پاس آتا ہے تو بھاگ کیوں جاتے ہو ؟‌