نعت  شريف
ہم خاک ہيں اور خاک ہي ماویٰ ہے ہمارا

خاکي تو وہ آدم جد اعلٰی  ہے ہمارا
اللہ ہميں خاک کرے اپني طلب ميں
يہ خاک تو سرکار سے تمغا ہے ہمارا
جس خاک پہ رکھتے تھے قدم سيد عالم
اس خاک پہ قرباں دل شيدا ہے ہمارا
خم ہوگئي پشت فلک اس طعن زمين سے
سن ہم پہ مدينہ ہے وہ رتبہ ہے ہمارا
اس نے لقب خاک شہنشاہ سے پايا
جو حيدر کرار کہ مولي ہے ہمارا
اے مدعيو خاک کو تم خاک نہ سمجھے
اس خاک ميں مدفوں شہ بطحا ہے ہمارا
معمور اسي خاک سے قبلہ ہے ہمارا
ہم خاک اڑائيں گئے جو وہ خاک نہ پائي
آباد رضا جس پہ مدينہ ہے ہمارا