نعت  شريف
لم يات نظيرک في نظر مثل تو نہ شد پيدا جانا

جگ راج کو تاج تورے سرسوہے تجھ کو شہ دوسرا جانا
البحر علا والموج طغي من بے کس و طوفاں ہوش ربا
منجدھار ميں ہوں بگڑي ہے ہوا موري نيا پار لگا جانا
يا شمس نظرت الي ليلي چوبطيبہ رسي عرضے بکني
توري جوت کي جھل جھل جگ ميں رچي موري شب نے نہ دن ہونا جانا
لک بدر في الوجہ الاجمل خط ہالہ مہ زلف ابر اجل
تورے چندن چندر پرو کنڈل رحمت کي برن برسا جانا
انا في عطش وسخاک اتم اے گيسوئے پاک اے ابر کرم
برسن ہارے رم جھم رم جھم دو بوند ادھر بھي گرا جانا
يا قافلتي زيدي اجلک رحمے برحسرت تشنہ لبک
مورا جيرا لرجے درک درک طيبہ سے ابھي نہ سنا جانا
واھا لسويعات ذہبت آن عہد حضور بار گہت
جب ياد آوت موہے کہ نہ پرت دردادہ? مدينے کا جانا
القلب شج والھم شجون دل زار چناں جاں زير چنوں
پت اپني بپت ميں کاسے کہوں مرا کون ہے تيرے سوا جانا
الروح فداک فزد حرقا يک شعلہ دگر برزن عشقا
موراتن من دھن سب پھونک ديا يہ جان بھي پيارے جلا جانا
بس خامہ? خام نوائے رضا نہ يہ طرز مري نہ يہ رنگ مرا
ارشاد احبا ناطق تھا ناچار اس راہ پڑا جانا