نعت  شريف
ْشور مہ نو سن کر تجھ تک ميں دواں آيا

ساقي ميں ترے صدقے ميں مے دے رمضاں آيا
اس گل کے سوا ہر گل باگوش گراں آيا
ديکھے ہي گي اے بلبل جب وقت فغاں آيا
جب بام تجلي پر وہ نير جاں آيا
سر تھا جو گرا جھک کر دل تھا جو تپاں آيا
جنت کو حرم سمجھا آتے تو يہاں آيا
اب تک کے ہر ايک کا منہ کہتا ہوں کہاں آيا
طيبہ کے سوا سب باغ پامال فنا ہونگے
ديکھو گے چمن والو جب عہد خزاں آيا
سر اور وہ سنگ در آنکھ اور وہ بزم نور
ظالم کو وطن کا دھيان آيا تو کہاں آيا
کچھ نعت کے طبقے کا عالم ہي نرالا ہے
سکتہ ميں پڑي ہے عقل چکر ميں گماں آيا
جلتي تھي زميں کيسي تھي دھوپ کڑي کيسي
لو وہ قد بے سايہ اب سايہ کناں آيا
طيبہ سے ہم آتے ہيں کہئے تو جناں والو!
کيا ديکھ کے جيتا ہے جوواں سے يہاں آيا
لے طوق الم سے اب آزاد ہو اے قمري
چٹھي لئے بخشش کي وہ سرو رواں آيا
نامہ سے رضا کے اب مٹ جاؤ  برے کامو
ديکھو مرے پلہ پر وہ اچھے مياں آيا 
بدکار رضاخوش ہو بد کام بھلے ہونگے
وہ اچھے مياں پيارا اچھوں کا مياں آيا