ماں باپ کی آہ
 ماں باپ ہر قسم کی آہ سے آشنا ہوجاتے ہیں ۔۔۔ 

آہ   اولاد بات نہیں مانتی ۔۔۔
 بچہ دیر سے گھر آتا ہے ۔۔۔
 آوارہ لڑکوں کے ساتھ پھرتا ہے ۔۔۔
 پڑھائی کی طرف دھیان کم دیتا ہے ۔۔۔
 خوشی نہیں غم دیتا ہے ۔۔۔
 بڑی لڑکی جوان ہوگئی ۔۔اے جی کچھ کرو۔۔
 ہائے ایک جان کتنے دکھ ۔۔۔
 کوئی اچھا سا لڑکا ڈھونڈو ۔۔۔
 پر آہ  اچھے لڑکے کدھر ملتے ہیں ۔؟
ماں‌باپ یونہی آہوں کے ہوکر رہ جاتے ہیں‌۔