نعت  شريف
تاب مرات سحر گرد بيابان عرب
غازہءروئے قمر دود چراغان عرب
الله الله بہار چمنستان عرب
پاک ہيں لوث خزاں سے گل و ريحان عرب
جوشش ابر سے خون گل فردوس گرے
چھيڑ دے رگ کو اگر خار بيابان عرب
تشنہ نہر جناں ہر عربي و عجمي
لب ہر نہر جناں تشنہ نيسان عرب
طوق غم آپ ہوائے پر قمري سے گرے
اگر آزاد کرے سرو خرامان عرب
مہر ميزاں ميں چھپا ہوتو حمل ميں چمکے
ڈالے اک بوند شب دے ميں جو باران عرب
عرش سے مژدہء بلقيس شفاعت لايا
طائر سدرہ نشيں مرغ سليمان عرب
حسن يوسف پہ کٹيں مصر ميں انگشت زناں
سر کٹاتے ہيں تيرے نام پہ مردان عرب
کوچہ کوچہ ميں مہکتي ہے يہاں بوئے قميص
يوسفستان ہے ہر ايک گوشہء کنعان عرب
بزم قدسي ميں ہے ياد لب جاں بخش حضور
عالم نور ميں ہے چشمہ حيوان عرب
پائے جبريل نے سرکار سے کيا کيا القاب
خسرو خيل ملک خادم سلطان عرب
بلبل و نيلپر و کبک بنو پروانو!
مہ و خورشيد پہ ہنستے ہيں چراغان عرب
حور سے کيا کہيں موسٰی سے مگر عرض کريں
کہ ہو خود حسن ازل طالب جانان عرب
کرم نعت کے نزديک تو کچھ دور نہيں
کہ رضائے عجمي ہو سگ حسان عرب