نعت  شريف
پھر اٹھا ولولہ ياد مغيلان عرب
پھر کھنچا دامن دل سوئے بيابان عرب
باغ فردوس کو جاتے ہيں ہزاران عرب
ہائے صحرائے عرب ہائے بيابان عرب
ميٹھي باتيں تري دين عجم ايمان عرب
نمکيں حسن ترا جان عجم شان عرب
اب تو ہے گريہ خوں گوہر دامان عرب
جس ميں دو لعل تھے زہرا کے وہ تھي کان عرب
دل وہي دل ہے جو آنکھوں سے ہو حيران عرب
آنکھيں وہ آنکھيں ہيں جو دل سے ہو قربان عرب
ہائے کس وقت لگي پھانس الم کي دل ميں
کہ بہت دور رہے وہ خار مغيلان عرب
فصل گل لاکھ نہ ہو وصل کي رکھ آس ہزار
پھولتے پھلتے ہيں بے فصل گلستان عرب
صدقے ہونے کو چلے آتے ہيں لاکھوں گلزار
کچھ عجب رنگ سے پھولا ہے گلستان عرب
عندليبي پہ جھگڑتے ہيں کٹے مرتے ہيں
گل و بلبل کو لڑاتا ہے گلستان عرب
صدقے رحمت کے کہاں پھول کہاں خار کا کام
خود ہے دامن کش بلبل گل خندان عرب
شادي حشر ميں صدقے ميں چھٹيں گے قيدي
عرش پر دھوم سے ہے دعوت مہمان عرب
چرچے ہوتے ہي يہ کمھلائے ہوئے پھولوں ميں
کيوں يہ دن ديکھتے پاتے جو بيابان عرب
تيرے بے دام کے بندے ہيں رئيسان عجم !
تيرے بے دام کے بندي ہيں ہزاران عرب
ہشت خلد آئيں وہاں کسب لطافت کو رضا
چار دن برسے جہاں ابر بہاران عرب