ماں کی وجہ سے قدر و قیمت

ماں  کی  وجہ  سے  قدر  و  قیمت  بڑھتی  ہے

 ایک  آدمی  جارہا  تھا  اس  نے  کھجور  کھائی  اور  کٹھلی  ایک  کھیت   میں   پھینک  دی  وہاں  شجر  نحل  اگ  آیا  ،  بتائیے  وہ  درخت  کس  کا  ہوگا ؟  گٹھلی  پھینکنے  والے کا  یا  جس  کی  زمین  ہے ؟  یقینا  اُسی  کا  ہوگا  جس  کی  زمین  ہے ،  نطفہ  جب  باپ  سے  جدا  ہوتا  ہے  تو  بے  قیمت  ہوتا  ہے  کوئی  مالیت  یا  وقعت  نہیں  ہوتی  بلکہ  نکلے  تو  اسے  پلید  کردیتا  ہے ،  اور  جس  پر  لگ  جائے  اسے  دھونا  پڑتا  ہے  ۔۔۔ مگر  جونہی   وہ  ماں  کے  رحم  میں  پہنچتا  ہے  تو  اب اس  نطفے  کی  قدر  و  قیمت  بڑھنے  لگتی  ہے ،  وہ ولی  بنا ،  قطب بنا ،  غوث بنا  مسجد  کا  امام بنا ، آپ  جب  بھی  بولتے  ہیں  تو  یوں  بولتے ہیں  ماں  باپ  کی  خدمت  کرو  پہلے  ماں  پھر  باپ  ،  جب  تکلیف  پہنچتی  ہے  تو  ماں  ہی  یاد آتی  ہے  ، ماں  ہوگی  تو  باپ  بنو گے ۔۔۔  ایک  بندہ  کہہ رہا  تھا  مختار شاہ  باپ  ہوگا  تو  ماں  بنے  گی  میں  نے  کہا  انسانیت  کی  تاریخ  میں  ایسی  مثال موجود ہے  کہ  باپ نہ  تھا  لیکن  ماں  بن  گئی  حضرت مریم علیہ السلام  تم  کوئی  مثال  دکھادو  کہ  ماں  نہیں  تھی  اور وہ  باپ  بن گیا ۔  چپ کر گئے ۔۔۔۔ میں  نے  کہا مانو  کہ  ماں  ہی  کہ  وجہ  سے  قدر و قیمت  بڑھتی ہے ۔

One comment

جواب دیجئے

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.