حدیث نمبر :33

روایت ہے حضرت انس سے کہ یہ بہت کم تھا کہ حضور ہمیں اس کے بغیروعظ فرمائیں کہ جو امین نہیں اس کا ایمان نہیں جو پابند وعدہ نہیں اس کا دین نہیں ۱؎یہ حدیث بیہقی نے شعب الایمان میں روایت کی۔

شرح

۱؎ یعنی امانت داری اور پابندی وعدہ کے بغیر ایمان اور دین کامل نہیں،امانت میں مال،زر،لوگوں کی عزت وآبروریزی حتی کہ عورت کی اپنی عفّت سب داخل ہیں،بلکہ سارے اعمال صالحہ بھی اﷲ کی امانتیں ہیں۔حضور سے عشق و محبّت حضور صلی اللہ علیہ وسلم کی امانت ہے،رب فرماتا ہے۔”اِنَّا عَرَضْنَا الْاَمَانَۃَ “الخ۔عہد میں میثاق کے دن رب سے عہد،بیعت کے وقت شیخ سے عہد،نکاح کے وقت خاوند یا بیوی سے عہد،جو جائزوعدہ دوست سے کیا جائے یہ سب داخل ہیں۔ان سب کا پورا کرنا لازم و ناجائز و عدہ توڑنا ضروری اگر کسی سے زنا،چوری،حرام خوری یا کفر کا وعدہ کیا تو اسے ہرگز پورا نہ کرے کہ یہ رب کے عہد کے مقابلے میں ہے۔اﷲ اور رسول سے وعدہ کیا ہے ان سے بچنے کا اسے پورا کرے۔