*🌺🍃🌸💎 ” نـغـمـۂ وفـا ” 💎🌸🍃

*_____________________________________*

امامِ عشق و محبت ، تاجدارِ اھلِ وفا ، مجاہد اسلام ، پیکر عزم وہمت ، مرد آہن ، کوہ استقلال ، مؤذنِ نبى حضرت سیدنا *بلال حبشی* رضی اللہ تعالٰی عنہ کو خراج وفا _______

*یوم وصال:* 20 محرم الحرام … 20 ھجری

*_______________________*

کعبـے سے دی ھے آپ نـے پہلی اذاں *بلال*

کرتے ھیں رشک آپ پہ دونوں جہاں *بلال*

کردارسے لکھی ھے جو تو نے کتابِ عشق

ھر لفظ ھے وفاؤں کی اک کہکشاں *بلال*

تاریخ ، تیری جرأت وہمت پہ ھے گواہ

سب سے الگ ھے تیری وفا کا جہاں *بلال*

کیاکیا ستم نہ ڈھائے تھے تجھ پر اُمیّہ نـے

اقرارِ حق سـے ٹھہـری نہ تیـری زباں *بلال*

لغزش نہ آئی آپ کے پائے ثبات میں

حقـانیت کے آپ ھیں کوہِ گراں *بلال*

مکہ *”اَحَد اَحَد”* کی صداؤں سـے گونج اٹھا

خورشیدِ انقلاب تھا تیرا بیاں *بلال*

*بو بکر* نـے خرید کے ایسے بڑھائـے دام

دولت اگر زمیں ھے ، تو ھیں آسماں *بلال*

پایا ھے تو نے خدمتِ سرکار کا شَرَف

کونین ، بن گئـے ھیں ترے قدرداں *بلال*

تیـری غـلامی ، رشکِ شہنشاہیت بنی

اب تیرے درپہ جھکتـے ھیں شاہِ شہاں *بلال*

چشـمِ رسول سے ترے جوھر نکھر گئے

ھر نقش بن گیا ھے ترا جاوداں *بلال*

اسلام کا جمـال ھے تیرے جمال میں

سیرت تری ، ہـے دین کی اک ترجماں *بلال*

جو نقش تو نے لوحِ وفا پر بنائے ھیں

قائم رھیں گے اُنکے ابد تک نشاں *بلال*

پہلـے نقیب ؛ دونوں حرم کے بنے ھیں آپ

قربان اِس شَرَف پہ دلِ مومناں *بلال*

ناز و نیاز کا وہ سماں کون بھولے گا

آقا کو دیکھ دیکھ کے دیتے اذاں *بلال*

خوشبو تری اذان کی، ہر اک اذاں میں ہے

کتنا مہک رھا ھـے ترا گلستاں *بلال*

سیراب ھو رھے ھیں محبت کے سارے باغ

لبریز ھے وفا سے تری نہرِ جاں *بلال*

اھلِ وفا کو تیری قیادت سے ھے عروج

بڑھتا ھی جا رھا ھے ترا کارواں *بلال*

تیری اذان گونجے گی عالَم میں تا ابد

تیرا لقَب ” مؤذنِ شاہِ زماں ” *بلال*

ھے تیری ذات ، نازشِ اصحابِ مصطفٰی

ملَّت کا افتخار ، ترا آشیاں *بلال*؛

کھیلے *حسن حسین* بھی آغوش میں تری

گوہرتری وفا کے ھیں رشکِ جناں *بلال*

پہنچـے جـو خـلد میں شبِ معــراج ، مصطفٰی

آھٹ تری ، حضور نے پائى وھاں *بلال*؛

شمس وقمر بھی تیری تجلّی سے ہیچ ھیں

جلوہ نبی کاتجھ میں ھے ایسا عیاں *بلال*

قدموں میں ھے جبینِ فلک بھی جھکی ھوئی

ھے مخزن کمال ، ترا آستاں *بلال*

ایسا جلال طاری تھا میدان *بدر* میں

بن کر گرے تھے کفر پہ برقِ تپاں *بلال*

تاریخ کے جھروکے سـے پھوٹیں گی تابشیں

روشن ، سدا رھے گی تری داستاں *بلال*

فــرمانِ مصطفٰـی کی روایت کا ھـے شَــرَف

جس سے ترا وجود ھوا بیکراں *بلال*

تیـری اداؤں سے رگِ ایماں میں جوش ہـے

تیرے قدم کی خاک ھے عــزمِ جـواں *بلال*

کونین تیری فطرتِ بیباک پر نثار

ھے خوب واہ واہ تری عز و شاں *بلال*

ملتی ھـے فوجِ حق کو ترے فیض کی رَسَد

رھتا ھے اھلِ حق پہ ترا سائباں *بلال*

تیری ھراک ادا پہ کروڑوں سـلام ھـوں

فخـرِ زمیں *بلال*؛ وقـارِ زماں *بلال*

حاصل رھـے *فریدی* کو توصیفِ حـق کا نور

روشن رھیں یہ خامہ و فکر و زباں *بلال*

______________

https://www.fareedimisbahi.com/

*✍🏼 نتیجۂ فکر*

محمد سلمان رضا فریدی مصباحی صدیقی

بارہ بنکوی

(مسقط؛ عمان)

+96899633908

*” پیشکش “*

غزالی صدیقی

( راجکوٹ گجرات)