*’تاجدارِ حرم’* ایک انتہائی مشہور و معروف قوالی ہے اور اس میں اردو، برج بھاشا، فارسی اور عربی کے اشعار ہیں۔

*عاطف اسلم اور کوک اسٹوڈیو کی ٹیم نے اس میں ایسی فحش غلطیاں کی ہیں جس پر انہیں توبہ اور تجدیدِ ایمان کرنا لازم ہے۔*

*افسوس* کے یہ کئی سالوں سے نشر بھی ہو رہی ہے اور علم سے نابلد عوام بے دیہانی میں بڑے زوق وشوق سے سن بھی رہے ہیں۔

*علماء دین* چونکہ ان چیزوں پر خود توجہ نہیں فرماتے کیونکہ ظاہر ہے وہ ان غیر شرعی انداز میں پڑھے گئے کلاموں کو سننے سے اپنے کانوں کو محفوظ رکھتے ہیں۔ لیکن افسوس کے عاقل لوگ جو اسے قوالی جان کر سنتے رہے وہ بھی ان فحش غلطیوں کو نہ پکڑ سکے۔

ڈان نیوز پر 16-12-2018 کو شائع شدہ ایک تحریر میں اس جانب جو نشاندہی کی گئی وہ آپ حضرات کی خدمت میں حاضر ہے۔

*نمبر ایک:*

گویے عاطف اسلم نے نبی کریم ﷺ کو ‘عرب کے کنور‘ (یعنی ‘حجاز کے شہزادے’) کے بجائے ‘رب کے کنور‘ (یعنی ‘خدا کے شہزادے’) پڑھ دیا۔ (جو کہ کفریہ الفاظ ہیں)

*نمبر دو:*

حضور علیہ السلام سے دُور ہونے (‘در فرقتِ تو اے اُمّی لقب’) کو ‘دارِ فرقت تو اے اُمّی لقب’ (یعنی ‘دوری کا گھر تم اے اُمّی لقب‘) پڑھ دیا ہے

(جو ظاہر ہے گستاخی و بے ادبی کی انتہا ہے)

*نمبر تین:*

‘گاہے بفِگن دزدیدہ نظر’ (یعنی ‘کبھی آہستہ سے نظر ڈالو’) کو کم علمی کی وجہ سے ‘گاہے بگہا دزدیدہ نظر’ پڑھ دیا ہے جس کا کوئی مطلب نکلتا ہی نہیں ہے۔ ( ڈان نیوز کی تحریر میں درزیدہ کا ترجمہ چوری چوری لکھا گیا ہے)

*نمبر چار:*

‘اے مشک بید عَنبر فِشاں’ (یعنی ‘اے خوشبو پھیلانے والے درخت’) کو ‘اے مجتبِ زُمبر فِشاں’ پڑھ دیا ہے جس کے سرے سے کوئی معنی ہی نہیں ہیں۔

*نمبر پانچ:*

‘اے قاصدِ فرخندہ په’ (یعنی ‘اے مبارک قدم پیغمبر’) ‘اے قاصدِ پُرخندہ پہ’ پڑھ دیا۔ ‘پر خندہ’ کے معنی ‘ہنسی سے بھرے ہوئے’ کے ہیں۔

(اور یہ بھی توہین و گستاخی ہے)

*(بے دیہانی میں اس کو سننے اور پڑھنے والے پر توبہ لازم ہے)*

*کوک اسٹوڈیو کی ٹیم اور گویے عاطف اسلم پر مزید کیا حکم ہو گا اس پر علماء دین ضرور رہنمائی فرمائیں)*

اللہ تعالیٰ تمام سنیوں کے ایمان کی حفاظت فرمائے۔ آمین

عبد المصطفیٰ محمد نسیم القادری۔