دیوبندیوں کی امام بیہقی شافعی علیہ الرحمہ پر جسارتیں

حبیب اللہ ڈیروی دیوبندی (جو تحریفیوں کا بادشاہ سرفراز دیوبندی کا شاگرد ہے) امام بیہقی شافعی علیہ الرحمہ پر ایسے جسارت کرتا ہے:

1-حضرت بیہقی نے جان بوجھ کر یہ جھوٹی روایت اپنے مذہب کو سہارا دینے کے لیے ذکر کی۔..الخ [توضیح الکلام پر ایک نظر ص 129]

2-حضرت امام بیہقی نے اپنے مذہب کی حمایت میں دو جرم کا ارتکاب کیا [توضیح الکلام پر ایک نظر ص 131]

3-حضرت بیہقی جھوٹے اور مجہول راویوں سے اپنا دین حاصل کر رہے ہیں [توضیح الکلام پر ایک نظر 131]

4-حضرت بیہقی نے زبردست خیانت کا ارتکاب کیا..الخ [توضیح الکلام پر ایک نظر ص 136]

5-امام بیہقی عجیب کارنامے انجام دے رہے ہیں۔کہیں کی اینٹ کہیں کا روڑا بھان متی نے کنبہ جوڑا۔[توضیح الکلام پر ایک نظر ص 141]

6-امام بیہقی نے اس مسئلہ میں سینہ زوری اورتک بندی سے کام لیا ہے۔ [توضیح الکلام پر ایک نظر ص 140]

7-یہ دسیسہ کاری امام بیہقی نے خود قبول کی۔[توضیح الکلام پر ایک نظر ص 248]

8-کتاب القراءۃ میں یوں تحریف کی۔ [توضح الکلام پر ایک نظر ص 136]

اور امام محمد بن اسحاق بن یسار (امام المغازی) کے بارے میں یہی دیوبندی لکھتا ہے:

محمد ابن اسحاق مشہور دلّا ہے [توضیح الکلام پر ایک نظر ص 117]

اس کے علاوہ اسی دیوبندی نے اور کئی محدثین کی گستاخیاں اور توہین کیں ہیں اپنی کتب میں۔

اللہ عزوجل ہر مسلمان کو ان دیوبندیوں سے محفوظ رکھے۔ آمین