ہم میں سےکون روزانہ قرآن پاک پڑھتاہے

*مَنْ مِنَّا يَقْرَأُ القُرْآنُ يَوْمِيًّا ؟*

إِنَّ القُرْآنَ مُقَسَّمٌ إِلَى ثَلَاثِينَ جُزْء وَمُتَوَسِّطِ كُلِّ جُزْءٍ عِشْرُونَ صَفْحَةٍ ..

فَهَلْ مِنْ الصَّعْبِ قِرَاءَةُ عَشْرَة صَفَحَاتٍ يَوْمِيًّا؟!

إِنْ کُنا عَاجِزِينَ عَنْ خَتْمِ القُرْءَانِ فِي شَهْرٍ لِنَجْعَلْهُ فِي شَهْرَيْنِ، أَيْ قِرَاءَةُ کل يَوْم عَشْر صَفَحَاتٍ إِنَّهُ أَمَرُّ لَا يَسْتَغْرِقُ مِنَّا سِوَى رُبْعِ سَاعَةٍ !

إِنَّ قِرَاءَةَ الکَم الهَائِل مِنْ الرَّسَائِلِ فِي التِّلِيجْرَام وَالوَاتْسَاب وَالتِّوِيتِر ووو… اليَوْمِيَّةُ تَسْتَغْرِقُ مِنْ المَرْءِ أَكْثَرَ مِنْ سَاعَات يَوْمِيًّا !

فَهَلْ قِرَاءَةُ تِلْكَ الرَّسَائِلِ أَهَمُّ مِنْ قِرَاءَةِ القُرْآنِ؟!!

من لم يتغن بالقرآن – في معنى التغني قال الثوري – يستغني به عن غيره

قال ابن ابي المليكة – يحسن الصوت ما استطاع

قال الليث – يتحزن به ، لانه نزل بالحزن

قال الشافعي – يقرأ حدرا و تحزينا

وفي رواية قال الشافعي – يرفع صوته

قال البعض – يترنم

وقال البعض – يرقق به قلبه

وقال البعض – يتدبر فيه

فسر البخاري بالجهر وقال يجهر به

لان بالجهر يحصل التحسين و التحزبن و التلذيذ في السماع و القلب و التدبر فى معانى ألفاظه و تفسيرها ، و لا يحصل هذه الأنواع بالسر ومقدار الجهر يستمع القارئ تلاوته بنفسه و يتدبر و يتحزن !!!

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

*ہم میں سےکون روزانہ قرآن پاک پڑھتاہے*

قرآن کریم تیس پاروں پر منقسم ہےاور ہرپارہ لگ بھگ بیس صفحات کےدرمیان ہے

توکیا روزانہ دس صفحات پڑھنا مشکل ہے ؟

اگرہم مہینے میں ختم قرآن سےعاجزہیں تو اسےدو مہینےمیں توکرہی سکتےہیں یعنی روزانہ ہردن دس صفحے یہ ایساکام ہےجس میں ہمارےپندرہ منٹ سےزیادہ نہیں لگیں گے

جبکہ ٹیلیگرام واٹس ایپ ٹویٹر وغیرہ میں بہت سےبیکار رسالےپڑھنےمیں ہمارے کئی گھنٹےصرف ہوجاتےہیں

توکیایہ رسالےپڑھنا تلاوت قرآن سےزیادہ اہم ہے ؟

جوقرآن سےبےنیازی اختیار نہ کرے حضرت سفیان ثوری نےفرمایا کہ وہ اس کےسبب غیروں سےبےنیاز ہوجائےگا

ابن ملیکہ نےفرمایا : (تغنی کامطلب یہ ہےکہ ) جہاں تک ہوسکے بہترین آواز میں پڑھے

حضرت لیث نےفرمایا : غمگین صورت بنائےکہ قرآن غم کےساتھ نازل ہواہے

امام شافعی نےفرمایا : حدر وحزن کیساتھ پڑھے

کسی نےفرمایا : ترنم کیساتھ پڑھے

ایک روایت میں امام شافعی نےفرمایا : اس کےذریعہ اپنےدل کونرم کرے

بعض نےفرمایا : اس میں غوروفکرکرے

امام بخاری نےوضاحت کی کہ بلند آوازسے پڑھے اسلئےکہ بلند آوازسے سننےمیں اوردل میں حسن وحزن ولذت اوراس کےالفاظ کےمعانی اوراسکی تفسیرمیں تدبر حاصل ہوتاہے

یہ سب چیزیں آہستگی پڑھنےمیں حاصل نہیں ہوسکتیں

اورجہر کی مقدار یہ ہےکہ تلاوت کرنےوالااپنی تلاوت کوخود سن لے اورتدبروحزن حاصل کرے

ترجم ۔۔۔۔۔۔۔۔

شکیل اخترقادری برکاتی

جواب دیجئے

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.