خواجہ غریب نواز علیہ الرحمہ کے خلفاء

خواجہ غریب نواز علیہ الرحمہ کے خلفاء

حضرت سلطان الہند خواجہ غریب نواز کا وصال ۶۲۷؁ھ میں ہوا۔ آپ کے بعد آپ کے جلیل الشان خلفاء و اہلِ ارادت نے ملک کے طول و عرض میں اسلام کی بساط بچھائی۔ سیرالاقطاب کے اندر حضرت کے خلفاء کی تعداد تیرہ بتائی گئی ہے مگر مصنف خزینۃ الاصفیاء کے بیان کے مطابق حضرت کے اکیس خلفاء ہیں جن کے اسماء گرامی یہ ہیں۔

۱۔ حضرت خواجہ قطب الدین بختیار کاکی علیہ الرحمہ (دہلی)

۲۔ حضرت خواجہ فخر الدین فرزندِ ارجمند حضرت خواجہ صاحب علیہ الرحمہ (سرور شریف)

۳۔ حضرت خواجہ برہان الدین عرف بدرعلیہ الرحمہ (بدر شریف)

۴۔ حضرت شیخ وجیہہ الدین علیہ الرحمہ (ہرات)

۵۔ حضرت خواجہ برہان الدین عرب بدر علیہ الرحمہ (اجمیر شریف)

۶۔ حضرت شیخ احمد علیہ الرحمہ (اجمیر شریف)

۷۔ حضرت شیخ محسن علیہ الرحمہ

۸۔ حضرت خواجہ سلیمان غازی علیہ الرحمہ

۹۔ حضرت شیخ شمس الدین علیہ الرحمہ

۱۰۔ حضرت خواجہ حسن خیاط علیہ الرحمہ

۱۱۔ حضرت عبداللہ (جن کا نام جے پال تھا) علیہ الرحمہ (اجمیر شریف)

۱۲۔ حضرت شیخ صدر الدین کرمانی علیہ الرحمہ

۱۳۔ حضرت بی بی حافظہ جمال صبیہ سعیدہ حضرت خواجہ علیہ الرحمہ (اجمیر شریف)

۱۴۔ حضرت شیخ محمد ترک نارنونی علیہ الرحمہ (دہلی)

۱۵۔ حضرت شیخ علی سنجری علیہ الرحمہ

۱۶۔ حضرت خواجہ یادگار علی سبزداری علیہ الرحمہ

۱۷۔ حضرت خواجہ عبداللہ بیابانی علیہ الرحمہ

۱۸۔ حضرت شیخ متا علیہ الرحمہ

۱۹۔ حضرت شیخ وحید علیہ الرحمہ

۲۰۔ حضرت شیخ مسعود غازی علیہ الرحمہ (واضح رہے کہ یہ حضرت سالار مسعود غازی بہرائچی کے علاوہ ہیں)

حضرت خواجہ غریب نواز علیہ الرحمہ کے بعد آپ کے جن خلفائے نامدار کے ذریعہ اکنافِ ہند میں اشاعتِ اسلام اور دینِ حنیف کے نمایاں کام سر انجام پائے ان میں خواجہ قطب الدین بختیار کاکی، شیخ حمید الدین ناگوری کے اسمائے مبارکہ بدرِ منیر کی طرح درخشاں اور تاباں ہیں اور یہ حقیقت ہے کہ وہ دور خطۂ ہند میں مسلم سلاطین کے قیامِ اقتدار کا دور تھا۔ شمشیر و سنان کے سائے میں مسلم سلاطین ایک طرف یہاں کے قدیم سیاسی نظام کی اصلاح کر رہے تھے دوسری طرف مشائخِ سلاسل بالخصوص حضرت خواجہ غریب نواز اور ان کے خلفاء دلوں کی سرزمین میں اپنے اخلاق و کردار اور خدمتِ خلق کے ذریعہ اسلامی تعلیم کی شجر کاری کر رہے تھے۔ ان کی بہی خواہی اور جذبۂ ہمدردی نے قلوب کی تسخیر فرمائی اور لوگ جوق در جوق اسلام کے دامن میں آتے گئے۔

مولانا محمد شاکر علی رضوی نوری

جواب دیجئے

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.