کیا نیوزی لینڈ مسلمان ہوگا؟

کیا نیوزی لینڈ مسلمان ہوگا؟ ۔۔۔۔۔۔۔۔تحریر :محمد اسمٰعیل بدایونی

رفیق شاہ میرے بچپن کا یا ر تھا ۔۔۔۔ہم دونوں ایک ساتھ ایک ہی محلے میں پلے بڑھے تھے جب بارش ہوتی اور گراؤنڈ میں پانی جمع ہو جاتا تو ہم دونوں گراؤنڈ میں جمع ہو نے والے گندے پانی میں بھی ساتھ نہاتے تھے ۔۔۔۔راجہ گراؤنڈ کی چکنی مٹی ہم نے ایک دوسرے پر خوب ملی ہے ۔۔۔۔۔پھر جب میٹرک میں آئے تو شیدے چائے والے کے نیم گندے پیالوں میں فخر سے چائے پیتے تھے ۔۔۔۔ پیسے ملا کر پشاوری کی نہاری کھاتے اور یہ ہماری سب سے بڑی عیاشی تصور ہو تی تھی ۔۔۔۔پھر میرا یار رفیق شاہ نوکری کے لیے باہر چلا گیا ۔

آج دس برس بعد میرا یار لوٹا تھا ہم نے کھانا باہر کھانے کا پروگرام بنایا ۔۔۔۔

بچپن کی یادیں تازہ کرنی تھی تو سوچا کیوں نہ شیدے چائے والے کی چائے پی جائے میں رفیق شاہ کو لے کر جب شیدے چائے والے کے ٹھیے پر پہنچا تو رفیق شاہ نے کہا : تم یہاں چائے پیو گے ؟

ہاں کیوں کیا ہو ا؟ میں نے حیرت سے پوچھا

اس گندے اور غلیظ ہو ٹل میں؟ ۔۔۔۔۔اس کے کپ دیکھ رہے ہو ؟

میں کبھی شیدے کے ہوٹل اور اس کے کپ کو دیکھتا اور کبھی اپنے یار کو دیکھتا ۔۔۔۔ میں کہنا چاہتا تھا یہ وہی ہو ٹل تو ہے جہاں تو نے ساری زندگی انہی گندے پیالوں میں چائے پی تھی ۔۔۔۔

خیر یار تھا اپنا ،پھر ملا بھی دس بعد تھا میں خاموش ہو گیا ۔۔۔۔پشاوری ہو ٹل پر پہنچا تو وہاں بھی اس نے یہ ہی راگ الاپنا شروع کر دیا

کہنے لگا :دیکھو! ان کے ہاتھ کتنے گندے ہو رہے ہیں گوشت کھلے آسمان تلے پک رہا ہے ۔۔۔اس بیرے کے کپڑے کتنے گندے ہیں وغیرہ وغیرہ ۔۔۔۔اس نے وہاں کے دس عیب مجھے کھڑے کھڑے دکھا دئیے ۔

آ ؤ ! تمہیں میں کھانا کھلاتا ہوں وہ مجھے ایک ہو ٹل میں لے گیاجہاں خانساماں نے بڑا صاف ستھرا لباس پہنا ہوا تھا ۔۔۔۔۔ماحول بھی بہت اچھا تھا ۔۔۔۔۔ برتن بھی بہت صاف ستھرے تھے ۔۔۔۔

ہم نے کھانا کھایا اور پھر نیوزی لینڈ کے سانحے اور ان کی وزیر اعظم پر بات ہوتی رہی ۔۔۔۔۔میں نے بھی اپنی نیک خواہشات کا اظہار کیا اللہ کرے نیوزی لینڈ کی وزیر اعظم مسلمان ہو جائے ۔۔۔۔

میرا یا رمسکرا یا اور پھر ہم وہاں سےنکل آئے ایک دوسرے کو خدا حافظ کہا اور ہم اپنے گھروں کو لوٹ گئے ۔۔۔۔ رات عجب منظر میرے سامنے تھا ۔

میں نے دیکھا نیوزی لینڈ کی پوری قوم اسلام قبول کرنے کے لیے تیار ہے ۔۔۔۔۔وہ سب چیخ چیخ کر کہہ رہے ہیں ہمیں نعمت ِ اسلام سے مالا مال کر دو ۔۔۔

میں نے بھی تمام مسلمانوں کو آواز دینا شروع کر دی مبارک ہو مبارک ہو نیوزی لینڈ کی قوم مسلمان ہو نے کے لیے کس قدر بے تاب ہے جلدی جلدی آؤ اور ان سب کو دامنِ اسلام میں سمیٹ لو ۔۔۔۔دیکھتے ہی دیکھتے دائیں بائیں سے سینکڑوں مسلمان انہیں نعمت ِ اسلام سے سرفراز کرنے کے لیے بے تاب ہو گئے ۔۔۔۔

جی آپ آئیے ! ایک نیوزی لینڈ کے شہری سے میں نے کہا ۔

وہ فورا ً ہی آگے آ گیا ۔

یہ لیجیے نعمت ِ اسلام ۔۔۔۔۔

لیکن وہ فوراً ہی دو قدم پیچھے ہٹ گیا

میں نے کہا تمہیں کیا ہو گیا؟ تم نعمت اسلام لینے کے لیے ابھی اتنے بے تاب تھے اور اب ایک دم پیچھے کیوں ہٹ گئے ؟

کہنے لگا تمہارے ہاتھ آ لودہ ہیں۔۔۔۔

میں غور کیا تو دیکھا ہاں ! واقعی میرے ہاتھ تو آلودہ تھے میں نے ابھی ابھی ہی تو دودھ میں پانی کی ملاوٹ کی تھی ۔۔۔۔میں نے اپنے دوسرے مسلمان بھائی سے کہا: تم نعمت اسلام انہیں دو لیکن اس کے ہاتھ بھی دوسرے مسلمان بھائی سے حسد کی وجہ سے آلودہ تھے ۔۔۔۔ تیسرے پر نگاہ گئی دیکھا تو اس کا لباس تکبر سے آلودہ تھا ۔۔۔۔۔غرض کوئی کینہ و بغض کے سبب گندا دکھائی دیتا تھا تو کوئی مال حرام کے سبب ۔۔۔۔کہیں سے قطع رحمی کی بد بو آ رہی تھی تو کہیں سے لڑائی جھگڑوں کے بھپکے اٹھ رہے تھے ۔۔۔۔۔

کوئی لوگوں کی جان سے کھیل رہاتھا تو کوئی انصاف کی مسند پر بیٹھ کر انصاف سے کھلواڑ کررہا تھا ۔۔۔۔۔۔۔کہیں پولیس والے کی بد معاشی کی بد بو تھی کئی لوگ تو ایسے تھے جو بالکل کچرے کا ڈھیر تھے مگر صرف اس مقصد کے تحت آ گئے تھے شاید یہ نیوزی لینڈ والے مسلمان ہو جائیں تو ان کی نجات کا کچھ سامان ہو جائے ۔۔۔۔۔

نیوزی لینڈ کی پوری قوم نعمت ِ اسلام لینے کے لیے بے تاب ہے مگر ہمارے آلود ہ کردار کامیلا کچیلا لباس انہیں ہمارے قریب نہیں آنے دے رہا ۔۔۔۔

میری آنکھ کھل چکی تھی ۔۔۔۔مجھے رات کا منظر یاد تھا رفیق شاہ میرے بچپن کا یار شیدے کے ہوٹل کی چائے نہیں پیتا کے اس کے برتن گندے ہیں ۔۔۔۔پشاوری کی نہاری نہیں کھا تا کہ وہاں صفائی کا اہتمام نہیں ہے تو کیا اقوام ِ عالم ہمارے گندے اور غلیظ کردار کو دیکھتے ہوئے اسلام قبول کر لے گی ؟

جہاں نیوزی لینڈ کی قوم مسلمانوں سے اظہار یکجہتی کرتے ہوئے نیوز اینکر حجاب پہن رہی تھی ، غیر مسلموں کے بچے سجدے کرکے مسلمانوں سے اظہار یکجہتی کر رہے تھے ۔۔۔نیوزی لینڈ کی وزیر اعظم جس وقت نبی کریم ﷺ کی حدیث” نبی کریم ﷺ کی امت جسد واحدہ” سُنا رہی تھی اس وقت ہم پی ایس ایل کےنام پر پاکستان میں طوائفوں کو نچوا رہے تھے ۔۔۔۔۔ گوئیے گا رہے تھے ۔۔۔۔ہم سب مستی سے جھوم رہے تھے ۔۔۔۔

اب آپ ہی بتائیے !

ہم سب کے کردار سے ایسی بد بو آرہی ہے کہ نیوزی لینڈ کی قوم نعمت ِ اسلام ہمارے ہاتھوں کیسے لے ؟

جب تک نبی کریم ﷺ کے اسوہ سے ہمارا کردار اجلا نہیں ہوگا نیوزی لینڈ مسلمان نہیں ہوگا ۔

ڈاکٹر اسمٰعیل بدایونی صاحب کی کتب صدائے درویش ۔ استشراقی فریب ۔ فکری یلغار اور صدائے قلم مکتبہ الغنی پبلشرز ہول سیل کراچی سے حاصل کیجیے اور گھر بیٹھے بذریعہ ڈاک فری ہوم ڈیلیوری کے لیے ابھی رابطہ کیجیے۔

جواب دیجئے

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.