یکم اپریل کو منائے جانے والے بے ہودہ کلچر پر اصلاحی افادات

*یکم اپریل کو منائے جانے والے بے ہودہ کلچر پر اصلاحی افادات*

*جھوٹ کی نحوست اور سچائی کی برکت*

از افادات: *حضرت مولانا پیر محمد رضا ثاقب مصطفائی نقشبندی*(بانی ادارۃ المصطفیٰ انٹرنیشل)

مرتب: *وسیم احمد رضوی، نوری مشن* مالیگاؤں

waseemrazvi92@gmail.com

اسلام ایک ایسا دین ہے جو اپنے ماننے والوں کی ہمہ وقت رہنمائی کرتا ہے۔ میرے حضور صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا انما انا لکم مثل والد میرے غلامو! میں تمہارے لیے باپ کی جگہ پر ہو۔ جب تم سے کوئی واش روم میں جائے تو پہلے اپنا بایاں قدم آگے رکھے۔ جس طرح ایک باپ اپنے بیٹوں کو سمجھاتا ہے؛ بڑی سے بڑی بات بھی سمجھاتا ہے اور چھوٹی سے چھوٹی بات بھی سمجھاتا ہے۔ تو میرے حضور صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا کہ مَیں تمہارے لیے باپ کی جگہ پر ہوں۔ تو جب تم واش روم میں جاؤ تو اپنا بایاں قدم آگے رکھو۔ کہ مَیں تمہیں ہر طرح کی تعلیم دینے آیا ہوں۔

میرے اور آپ کے آقا و مولیٰ حضور نبی رحمت صلی اللہ علیہ و الہ وسلم نے ارشاد فرمایا: سچائی طمانیت ہے؛ یہ اندر کا اطمنان ہے، یہ باطن کی روشنی ہے۔ جو کذب ہے، جو جھوٹ ہے وہ عدم اطمنان ہے، بے چینی ہے، اضطراب ہے۔ ہر وقت ایک کھٹکا لگا رہتا ہے کہ میرا جھوٹ پکڑا جائے گا۔ ہمیں سچ بولنے کی تلقین کی گئی اور یہ بھی ارشاد فرمایا گیا کہ سچ انسان کو نیکی کی طرف لے جاتا ہے اور نیکی انسان کو جنت کی طرف لے جاتی ہے۔ اور اس کے بر عکس جھوٹ انسان کو گناہ کی طرف لے جاتا ہے اور گناہ انسان کو جہنم کی طرف لے جاتا ہے۔ 

مومن تو سچائی کا دوسرا نام ہے۔ آقا کریم صلی اللہ علیہ وسلم نے خود ارشاد فرمایا الا انبئکم باکبر الکبائر؟ صحابہ! تمہیں بڑے بڑے گناہوں کی خبر نہ دوں؟ صحابہ نے عرض کی کیوں نہیں یا رسول اللہ ! آپ ارشاد فرمائیں۔ تو حضور نے فرمایا کہ ایک؛ اللہ کے ساتھ کسی کو شریک ٹھہرانا ۔دوسری بات؛ کسی انسان کا قتل کرنا۔ تیسری بات؛ والدین کی نا فرمانی کرنا۔ جب حضور یہ فرمارہے تھے تو حضور نے ٹیک لگائی ہوئی تھی؛ جب یہ چوتھی چیز بیان فرمانے لگے تو حضور ٹیک چھوڑ کے آگے ہوگئے۔ کہ یہ کتنی اہم بات تھی؛ فرمایا: الا و قول الزور فرمایا سن لو! جھوٹی بات کرنا۔

تو جو گناہ بڑے بڑے ہیں، جہنم میں لے جانے والے ہیں، ہلاک کردینے والے ہیں؛ یہ چار گناہ ان میں سے بھی آگے بڑے ہیں۔ جھوٹوں پر اللہ تعالیٰ نے لعنت کی ہے۔ لَعْنَۃُ اللّٰہِ علیٰ الْکَاذبِیْن۔ باقاعدہ جھوٹوں کا ذکر کرکے ان پر لعنت کی گئی ہے۔ اس لیے مومن اپنی زندگی کے اندر سچ ہی بولتا ہے ۔ ہاں ! کبھی وہ ایسے مشکل وقت میں پھنس جائے تو جہاں اس کے لیے جان بچانا مشکل ہو؛ وہاں اس کو اجازت فراہم کی گئی ہے کہ اگر کسی عضو کے تلف ہونے کا یا جان کے ضائع ہونے کا ڈر ہو تو بعض مواقع پر اسے اجازت دی گئی ہے۔ یا دو آدمیوں کے درمیان صلح کروانا پڑ جائے کہ اس وقت آپ کوئی ایسی بات بولیں کہ یار مَیں تو فلاں سے ملا تھا وہ تیرے بارے میں اتنے اچھے جذبات رکھتا ہے۔ تمہاری خوامخواہ کی لڑائی ہے اُس کے دل میں تو کچھ بھی نہیں ہے۔ اُس نے تو یہ یہ مجھ سے باتیں کی ہیں۔ تو یہ کہے گا نہیں نہیں! میرے دل میں بھی کچھ نہیں ہے ۔ پانچ سات باتیں وہ بھی کرے گا تو یہ اُس کو جاکے بتائے گا ۔ تو یہ ہوگا کہ دونوں آپس میں جُڑ جائیں گے، قریب ہوجائیں گے… لیکن؛ وہ سچ جو دونوں کو آپس میں توڑ دے، دو انسانوں کی تفریق کردے ؛ وہ سچ بھی نقصان دہ ہے۔ اس لیے کہ مقصد خیر ہے، مقصد بھلائی ہے۔ 

ہمیں سچ بولنے کی تلقین کی گئی ہے۔ اپنی ساری زندگی کو سچ کے نور سے مزین کریں اور زندگی کے کسی مرحلے کے اندر بھی ہمیں جھوٹ کی اجازت نہیں دی گئی۔ ہم بعض معاشرتوں کی رسوم اپنے سینے لگا لیتے ہیں اور یہ یکم اپریل کا دن یہ جھوٹ بولنے کا عالمی دن منایا جارہا ہے۔ اور اس میں لوگ جھوٹ بولیں گے ہمارا میڈیا بھی ایسی پھلجڑیاں چھوڑے گا۔ اسی طرح ہمارا پرنٹ میڈیا بھی بعض اوقات کوئی خبر لکھ دیتا ہے اور آخر میں لکھتا ہے کہ یہ اپریل فول ہے… میاں! تم خود فول بنے ہوئے ہو، بے وقوف بنے ہوئے ہو، لوگوں کو بے وقوف کس لیے بنارہے ہو؟ تم خود بے وقوف بن گئے ہو۔

اپنی زندگی کو ہمیشہ سچ سے مزین کیجیے۔ سچوں کے ساتھ ہونے کا کہا گیا۔ سچ کے ساتھ رہنے کی تلقین کی گئی۔ سچ طمانیتِ قلب کا سبب ہے۔ سچ نیکی کی طرف لے جاتا ہے۔ نیکی جنت کی طرف لے جاتی ہے۔ جھوٹ؛ باطن کی غلاظت ہے اور فرشتوں کی دوری کا سبب اور ذریعہ ہے۔ اور رب کی رحمتوں سے بندوں کو دور کردیتا ہے۔ اللہ سچوں کو پسند کرتا ہے؛ جھوٹوں کو پسند نہیں کرتا۔ یہ تھوڑی سی زندگی اللہ نے ہمیں ودیعت کی ہے؛ اس کو سچائی کے ساتھ اگر ہم گزاریں گے تو ہماری زندگی طمانیت کے نور سے ہمیشہ منور ہوتے ہوئے گزاریں گے۔ ہم ایک راحت بھری زندگی گزاریں گے۔ لیکن اگر ہم جھوٹ بولیں گے تو پھر جھوٹ سے ہماری زندگی کے اندر ایک تنگی، ایک اضطراب اور ایک بے چینی ہوگی۔ جو کبھی بھی ہمارا دامن نہیں چھوڑے گی۔ اللہ ہمیں ہر مرحلۂ حیات میں سچ کو نبھانے کی، سچ بولنے کی، سچی بات کرنے کی توفیق عطا فرمائے۔ آمین بجاہ سید المرسلین صلی اللہ علیہ وسلم!

۳۱؍ مارچ ۲۰۱۸ء(ماخوذ از افاداتِ مصطفائی،زیرِ ترتیب)

٭٭٭

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out /  Change )

Google photo

You are commenting using your Google account. Log Out /  Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out /  Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out /  Change )

Connecting to %s

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.