حضورﷺ نے منع فرمایا

حدیث نمبر :448

روایت ہے حمید حمیری سے ۱؎ فرماتے ہیں کہ میں اس شخص سے ملا جوحضرت ابوہریرہ کی طرح نبی صلی اللہ علیہ وسلم کی صحبت میں چار سال رہے۲؎ فرمایا منع کیا نبی صلی اللہ علیہ وسلم نے اس بات سے کہ عورت مرد کے بچے ہوئے سے غسل کرے یا مرد عورت کے بچے ہوئے سے غسل کرے۳؎ مسدد نے یہ بڑھایا۴؎ کہ دونوں ایک ساتھ چلو لیں ۵؎ اسے ابوداؤد،نسائی نے روایت کیااور احمدنے اس کے اول میں یہ بھی زیادتی کی کہ حضور نے منع فرمایا اس سے کہ ہم میں سے کوئی روزانہ گنگھی کرے یا غسل خانہ میں پیشاب کرے۶؎ اسے ابن ماجہ نے عبداﷲ ابن سرجس سے روایت کیا۔

شرح

۱؎ آپ حمید ابن عبدالرحمن ہیں،بصرہ کے باشندے،قبیلہ حَمِیرسے ہیں،جلیل القدر تابعی ہیں اپنے زمانہ میں بڑے عالم تھے۔

۲؎ وہ صحابی یا حکم ابن عمروہیں یاعبداﷲ ابن سرجس اوریاعبداﷲ ابن مغفل،چونکہ تمام صحابہ عادل ہیں اس لئے صحابی کا نام معلوم نہ ہونا مضر نہیں۔

۳؎ یہ ممانعت بھی تنزیہی ہے یعنی ایسا کرنا بہتر نہیں اگر کرے تو حرج بھی نہیں۔

۴؎ آپ کا نام مسدد(دال کے فتح)سے ابن مسرحد ہے،تبع تابعین میں ہیں،بصرہ کے باشندے ہیں، ۱۲۸ھ؁ میں وفات ہوئی۔

۵؎ یعنی اگرعورت و مرد ایک برتن سے وضو یا غسل کریں تو آگے پیچھے چلو نہ لیں بلکہ ایک ساتھ لیں تاکہ ان میں سے کوئی دوسرے کے فضلہ سے طہارت نہ کرے اگرچہ آئندہ چلوؤںمیں فضلے سے ہی طہارت ہوگی مگر یہ معاف ہے۔

۶؎ غسل خانہ میں پیشاب کرنا وسوسہ کی بیماری پیدا کرتا ہے خصوصًا جب کہ پانی نکلنے کی کوئی نالی وغیرہ نہ ہو اور روزانہ بال کا ڑھنے مانگ نکالنے میں غفلت پیدا ہوتی ہے۔یہ کام کبھی کبھی کرنا سنت ہے،بال پراگندہ رکھنا بھی ٹھیک نہیں۔

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out /  Change )

Google photo

You are commenting using your Google account. Log Out /  Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out /  Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out /  Change )

Connecting to %s

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.