وَاَنِ احۡكُمۡ بَيۡنَهُمۡ بِمَاۤ اَنۡزَلَ اللّٰهُ وَلَا تَتَّبِعۡ اَهۡوَآءَهُمۡ وَاحۡذَرۡهُمۡ اَنۡ يَّفۡتِنُوۡكَ عَنۡۢ بَعۡضِ مَاۤ اَنۡزَلَ اللّٰهُ اِلَيۡكَ‌ؕ فَاِنۡ تَوَلَّوۡا فَاعۡلَمۡ اَنَّمَا يُرِيۡدُ اللّٰهُ اَنۡ يُّصِيۡبَهُمۡ بِبَـعۡضِ ذُنُوۡبِهِمۡ‌ؕ وَاِنَّ كَثِيۡرًا مِّنَ النَّاسِ لَفٰسِقُوۡنَ‏ ۞- سورۃ نمبر 5 المائدة آیت نمبر 49

أَعـوذُ بِاللهِ مِنَ الشَّيْـطانِ الرَّجيـم

بِسْمِ اللّٰهِ الرَّحْمٰنِ الرَّحِيْمِ

وَاَنِ احۡكُمۡ بَيۡنَهُمۡ بِمَاۤ اَنۡزَلَ اللّٰهُ وَلَا تَتَّبِعۡ اَهۡوَآءَهُمۡ وَاحۡذَرۡهُمۡ اَنۡ يَّفۡتِنُوۡكَ عَنۡۢ بَعۡضِ مَاۤ اَنۡزَلَ اللّٰهُ اِلَيۡكَ‌ؕ فَاِنۡ تَوَلَّوۡا فَاعۡلَمۡ اَنَّمَا يُرِيۡدُ اللّٰهُ اَنۡ يُّصِيۡبَهُمۡ بِبَـعۡضِ ذُنُوۡبِهِمۡ‌ؕ وَاِنَّ كَثِيۡرًا مِّنَ النَّاسِ لَفٰسِقُوۡنَ‏ ۞

ترجمہ:

اور یہ کہ آپ اللہ کے نازل کیے ہوئے (احکام) کے موافق ان کے درمیان فیصلہ کریں اور ان کی خواہشات کی پیروی نہ کریں اور ان سے ہوشیار رہیں ‘ کہیں یہ آپ کو ان بعض احکام سے ہٹا نہ دیں جو اللہ نے آپ کی طرف نازل کیے ہیں ‘ پھر اگر یہ روگردانی کریں تو آپ جان لیں کہ ان کو ان کے بعض گناہوں کی وجہ سے سزا دینا چاہتا ہے۔ اور بیشک بہت سے لوگ ضرور فاسق ہیں۔

تفسیر:

اللہ تعالیٰ کا ارشاد ہے : اور یہ کہ آپ اللہ کے نازل کیے ہوئے (احکام) کے موافق ان کے درمیان فیصلہ کریں اور ان کی خواہشات کی پیروی نہ کریں اور ان سے ہوشیار رہیں ‘ کہیں یہ آپ کو ان بعض احکام سے ہٹا نہ دیں جو اللہ نے آپ کی طرف نازل کیے ہیں ‘ پھر اگر یہ روگردانی کریں تو آپ جان لیں کہ ان کو ان کے بعض گناہوں کی وجہ سے سزا دینا چاہتا ہے۔ اور بیشک بہت سے لوگ ضرور فاسق ہیں۔ (المائدہ : ٤٩) 

شان نزول : 

امام ابو محمد عبدالملک بن ہشام متوفی ٢١٣ ھ لکھتے ہیں :

ابن اسحاق بیان کرتے ہیں کہ کعب بن اسد ‘ ابن صلوبا ‘ عبداللہ بن صوریا اور شاس بن قیس نے ایک دوسرے سے کہا : چلو (سیدنا) محمد (صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم) کے پاس جائیں۔ شاید ہم ان کو ان کے دین سے ورغلانے میں کامیاب ہوں ‘ کیونکہ وہ بشر ہیں ‘ وہ گئے اور آپ سے کہا : یا محمد (صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم) آپ جانتے ہیں کہ ہم یہود کے معزز علماء اور سردار ہیں اور اگر ہم آپ کی پیروی کریں گے تو تمام یہود آپ کی پیروی کریں گے اور ہماری مخالفت نہیں کریں گے ‘ ہمارا اپنی قوم کے بعض لوگوں سے جھگڑا ہے ‘ ہم آپ کو اس مقدمہ میں حاکم بنائیں گے۔ آپ ہمارے حق میں اور ان کے خلاف فیصلہ کردیں ‘ تو پھر ہم آپ پر ایمان لے آئیں گے اور آپ کی تصدیق کریں گے ‘ رسول اللہ (صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم) نے ان کی اس بات کو ماننے سے انکار کردیا۔ اس موقع پر یہ آیتیں نازل ہوئیں۔ (المائدہ : ٥٠۔ ٤٩) 

(السیرۃ النبویہ ‘ ج ٢‘ ص ١٨٠۔ ١٧٩‘ داراحیاء التراث العربی ‘ بیروت ‘ جامع البیان ‘ جز ٦ ص ١٥٤ دارالفکر ‘ بیروت ‘ اسباب النزول اللواحدی ‘ ص ٢٠٠‘ دارالکتب العلمیہ ‘ بیروت) 

اللہ تعالیٰ ان کو دنیا میں جزیہ ‘ جلاوطن کرنے اور قتل کرنے کی سزا دینا چاہتا ہے اور آخرت میں ان کے لیے بہت بڑا عذاب ہے۔

تبیان القرآن – سورۃ نمبر 5 المائدة آیت نمبر 49

جواب دیجئے

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.