مفتی منیب الرحمان نے چاند فریزر میں فریز نہیں کئے ہوئے کہ جب عوام کا جی چاہے ایک چاند نکالا آسمان پر سجا دیا اور کہا مبارک ہو مبارک ہو،

چاند دیکھنے اور اس کے اعلان کا ایک پراپر طریقہ کار ہے ،صرف اکیلے مفتی صاحب ہی ناسا کی بھیجی ہوئی دور بین سے نہیں دیکھتے اور بھی کئی صاحب سمجھ اس عمل میں میں شامل ہوتے ہیں ، محکمہ موسمیات کی تمام تر مشینری اور وزارت مذہبی امور پر مامور اشخاص بھی اس عمل میں حصۃ ڈالتے ہیں ،پاکستان کے تمام بڑے شہروں میں بھی چاند دیکھنے کا باقاعدہ اہتمام کیا جاتا ہے ،لیکین جب کہیں سے کوئی شواہد ہی نہیں ملتا تو مفتی صاحب انتہائی عاجزی کے ساتھ چاند نظر نہ آنے کا اعلان کر دیتے ہیں اور ان کا کام بھی بحیثیت سربراہ رویت ہلال کمیٹی اعلان کرنا ہی ہے ،چاند کسی اور متعلقہ شخص کو بھی نظر آجائے اور اس کے شواہد مل جائیں تو وہ اعلان کر دیں گے ،لہذاٰ جو لوگ چاند کی دھڑا دھڑ تصویریں کھینچ کر مفتی صاحب کی شان میں قصیدے پیش کر رہے ہیں کہ یہ دیکھو چاند تو آج ایک دن کا لگتا ہی نہیں ،یہ چند سیکنڈ کا چاند ہو ہی نہیں سکتا، مفتی صاحب کو عینک بدلنی پڑے گی ، ان تمام احباب سے گزارش ہے کہ جن تجربات کی رو سے آپ چاند نظر آنے کے بعد اس کی عمر کا اندازہ لگاتے ہیں اسی کا سہارا لے کر پہلے بھی راہنمائی فرما دیا کر یں اورمفتی صاحب کی خدمت میں پیش کر دیا کریں۔ آپ کو کیا لگتا ہے کہ ریٹنگ کے ریس میں دوڑتے چینلز کے گھوڑے چاند دیکھنے یا اس کے شواہد حاصل کرنے کی کو شش نہیں کرتے ہونگے اور کیا چاند نظر آنے کے بعد وہ رکیں گے ،کبھی نہیں ،ہو ہی نہیں سکتا ،غیر حتمی غیر سرکاری نتائج سے انہیں کوئی نہیں روک سکتا ،ٹیکنالوجی اور میڈیا کے اس جدید ترین دور میں مفتی صاحب آپکے ذاتی ششکوں کی بھینٹ نہیں چڑھ سکتے ۔

آخر میں اآپ تمام احباب سے التماس ہے کہ پوپلزئی کی آنکھیں نکال کر ناسا میں بھیج دیں یقین جانیءئے پاکستان کے سارے قرضے اتر جائیں گے۔

Waqar Shah