رمضان کا آخری جمعہ اور قضا نماز

کچھ لوگ اس غلط فہمی میں مبتلا ہیں کہ رمضان کے آخری جمعے کو چند رکعتیں پڑھنے سے پوری عمر کی قضا نمازیں معاف ہو جاتی ہیں- بعض جگہوں پر تو اس کا خاص اہتمام کیا جاتا ہے مانو کوئی بمپر آفر آیا ہو-

ایک مرتبہ میں نے اپنے محلے کی مسجد میں دیکھا کہ ایک اشتہار لگا ہوا ہے جس میں پوری عمر کی قضا نمازوں کو چٹکی میں معاف کروانے کا طریقہ لکھا ہوا تھا اور تائید میں چند بے اصل روایات بھی لکھی ہوئی تھیں….،

میں نے فوراً اس اشتہار کو وہاں سے ہٹا دیا اور اس کو لگانے والے کے متعلق دریافت کیا لیکن کچھ معلوم نہ ہو سکا-

ایسا آفر دیکھنے کے بعد وہ لوگ جن کی بیس تیس سال کی نمازیں قضا ہیں، اپنے جذبات پر قابو نہیں کر پاتے اور اصل جانے بغیر اس پر یقین کر لیتے ہیں- اس طرح کی باتیں بالکل غلط ہیں اور ان کی کوئی اصل نہیں ہے؛ علماے اہل سنت نے اس کا رد کیا ہے اور اسے ناجائز قرار دیا ہے-

امام اہل سنت، اعلی حضرت رحمہ اللہ تعالی اس کے متعلق لکھتے ہیں کہ یہ جاہلوں کی ایجاد اور محض ناجائز و باطل ہے-

(انظر: فتاوی رضویہ، ج7، ص53، ط رضا فاؤنڈیشن لاہور)

امام اہل سنت ایک دوسرے مقام پر لکھتے ہیں کہ آخری جمعہ میں اس کا پڑھنا اختراع کیا گیا ہے اور اس میں یہ سمجھا جاتا ہے کہ اس نماز سے عمر بھر کی اپنی اور ماں باپ کی بھی قضائیں اتر جاتی ہیں محض باطل و بدعت سیئہ شنیعہ ہے، کسی معتبر کتاب میں اس کا اصلاً نشان نہیں-

(ایضاً، ص418، 419)

صدر الشریعہ، حضرت علامہ مفتی امجد علی اعظمی رحمہ اللہ تعالی لکھتے ہیں کہ شب قدر یا رمضان کے آخری جمعے کو جو یہ قضاے عمری جماعت سے پڑھتے ہیں اور یہ سمجھتے ہیں کہ عمر بھر کی قضائیں اسی ایک نماز سے ادا ہو گئیں، یہ باطل محض ہے-

(بہار شریعت، ج1، ح4، ص708، قضا نماز کا بیان)

حضرت علامہ مفتی شریف الحق امجدی علیہ الرحمہ نے بھی اس کا رد کیا ہے اور اس کا تائید میں پیش کی جانے والی روایات کو علامہ ملا علی قاری حنفی علیہ الرحمہ کے حوالے سے موضوع قرار دیا ہے-

(فتاوی امجدیہ، ج1، ص272، 273)

علامہ قاضی شمس الدین احمد علیہ الرحمہ لکھتے ہیں کہ بعض لوگ شب قدر یا آخر رمضان میں جو نماز قضاے عمری کے نام سے پڑھتے ہیں اور یہ سمجھتے ہیں کہ عمر بھر کی قضاؤں کے لیے یہ کافی ہے، یہ بالکل غلط اور باطل محض ہے-

(قانون شریعت، ص241)

حضرت علامہ مفتی محمد وقار الدین قادری علیہ الرحمہ لکھتے ہیں کہ بعض علاقوں میں جو یہ مشہور ہے کہ رمضان المبارک کے جمعة الوداع کو چند رکعات نماز قضاے عمری کی نیت سے پڑھتے ہیں اور خیال یہ کیا جاتا ہے کہ یہ پوری عمر کی قضا نمازوں کے قائم مقام ہے، یہ غلط ہے- جتنی بھی نمازیں قضا ہوئی ہیں ان کو الگ الگ پڑھنا ضروری ہے-

(وقار الفتاوی، ج2، ص134)

حضرت علامہ غلام رسول سعیدی رحمہ اللہ تعالی لکھتے ہیں کہ بعض انپڑھ لوگوں میں مشہور ہے کہ رمضان کے آخری جمعہ کو ایک دن کی پانچ نمازیں وتر سمیت پڑھ لی جائیں تو ساری عمر کی قضا نمازیں ادا ہو جاتی ہیں اور اس کو قضاے عمری کہتے ہیں، یہ قطعاً باطل ہے- رمضان کی خصوصیت، فضیلت اور اجر و ثواب کی زیادتی ایک الگ بات ہے لیکن ایک دن کی قضا نمازیں پڑھنے سے ایک دن کی ہی ادا ہوں گی ساری عمر کی ادا نہیں ہوں گی-

(شرح صحیح مسلم، ج2، ص352)

ثابت ہوا کہ ایسی کوئی نماز نہیں ہے جسے پڑھنے سے پوری عمر کی قضا نماز ادا ہو جائے- یہ جو نماز پڑھی جاتی ہے، اس کی کوئی اصل نہیں ہے- یہ ناجائز و باطل ہے-

عبد مصطفی

Ramazan Ka Aakhiri Jumuah Qur Qaza Namaz

Kuchh Log Is Ghalat Fahmi Mein Mubtala Hain Ke Ramazan Ke Aakhiri Jume Ko Chand Rakatein Padhne Se Poori Umr Ki Qaza Namazein Muaaf Ho Jaati Hain

Baaz Jagaho Par To Is Ka Khaas Ihtemam Kiya Jaata Hai Maano Koi Bumper Offer Aaya Ho

Ek Martaba Maine Apne Muhalle Ki Masjid Mein Dekha Ke Ek Ishtehar Laga Hua Hai Jis Mein Poori Umr Ki Qaza Namazo Ko Chutki Mein Muaaf Karwane Ka Tariqa Likha Hua Tha Aur Tayeed Mein Chand Be Asal Riwayaat Bhi Likhi Huyi Thi……,

Maine Fauran Us Ishtehar Ko Wahan Se Hata Diya Aur Us Ko Lagane Waale Ke Mutalliq Daryaft Kiya Lekin Kuchh Maloom Na Ho Saka

Aisa Offer Dekhne Ke Baad Wo Log Jin Ki Bees Tees Saal Ki Namazein Qaza Hain, Apne Jazbaat Par Qaabu Nahin Kar Paate Aur Asal Jaane Bighair Is Par Yaqeen Kar Lete Hain

Is Tarah Ki Baatein Bilkul Ghalat Hain Aur In Ki Koi Asal Nahin Hai, Ulama -e- Ahle Sunnat Ne Is Ka Radd Kiya Hai Aur Ise Najayez Qaraar Diya Hai

Imam -e- Ahle Sunnat, Aala Hazrat Rahimahullahu Ta’ala Is Ke Mutalliq Likhte Hain Ke Ye Jahilo Ki Ijaad Aur Mahaz Najayez Wa Baatil Hai

(انظر: فتاوی رضویہ، ج7، ص53، ط رضا فاؤنڈیشن لاہور)

Imam -e- Ahle Sunnat Ek Dusre Maqaam Par Likhte Hain Ke Aakhiri Jumuah Mein Is Ka Padhna Ikhtira Kiya Gaya Hai Aur Is Mein Ye Samjha Jaata Hai Ke Is Namaz Se Umr Bhar Ki Apni Aur Maa Baap Ki Bhi Qazayein Utar Jaati Hain Mahaz Baatil Wa Bidd’at -e- Shania Hai, Kisi Moatbar Kitab Mein Is Ka Aslan Nishan Nahin

(ایضاً، ص418، 419)

Sadarushshariah, Hazrat Allama Mufti Amjad Ali Aazmi Rahimahullahu Ta’ala Likhte Hain Ke Shabe Qadr Ya Ramazan Ke Aakhiri Jume Ko Jo Ye Qaza -e- Umri Jama’at Se Padhte Hain Aur Ye Samajhte Hain Ke Umr Bhar Ki Qazayein Isi Ek Namaz Se Ada Ho Gayi, Ya Batil Mahaz Hai

(بہار شریعت، ج1، ح4، ص708، قضا نماز کا بیان)

Hazrat Allama Mufti Shariful Haque Amjadi Alaihi Rahma Ne Bhi Is Ka Radd Kiya Hai Aur Is Ki Tayeed Mein Pesh Ki Jaane Waali Riwayaat Ko Allama Mulla Ali Qaari Hanafi Alaihi Rahma Ke Hawale Se Mauzu Qarar Diya Hai

(فتاوی امجدیہ، ج1، ص272، 273)

Allama Qaazi Shamsuddin Ahmad Alaihi Rahma Likhte Hain Ke Baaz Log Shabe Qadr Ya Aakhir Ramzan Mein Jo Namaz Qaza -e- Umri Ke Naam Se Padhte Hain Aur Ye Samajhte Hain Ke Umr Bhar Ki Qazao Ke Liye Ye Kaafi Hai, Ye Bilkul Ghalat Aur Baatil Mahaz Hai

(قانون شریعت، ص241)

Hazrat Allama Mufti Muhammad Waqaruddin Qadri Razvi Alaihi Rahma Likhte Hain Ke Baaz Ilaaqo Mein Jo Ye Mash’hoor Hai Ke Ramazan Ke Aakhiri Jume Ko Chand Rakaat Namaz Qaza -e- Umri Ki Niyyat Se Padhte Hain Aur Khayal Ye Kiya Jaata Hai Ke Ye Poori Umr Ki Qaza Namazo Ke Qaayim Maqaam Hai, Ye Ghalat Hai…., Jitni Bhi Namazein Qaza Huyi Hain Un Ko Alag Alag Padhna Zaroori Hai

(وقار الفتاوی، ج2، ص134)

Hazrat Allama Ghulam Rasool Sayeedi Rahimahullahu Ta’ala Likhte Hain Ke Baaz Anpadh Logon Mein Mash’hoor Hai Ke Ramazan Ke Aakhiri Jumuah Ko Ek Din Ki Paanch Namazein Witr Samet Padh Li Jaayein To Saari Umr Ki Qaza Namazein Ada Ho Jaati Hain Aur Is Ko Qaza -e- Umri Kehte Hain, Ye Qata’an Baatil Hai

Ramazan Ki Khususiyat, Fazeelat Aur Ajro Sawab Ki Zyadati Ek Alag Baat Hai Lekin Ek Din Ki Qaza Namazein Padhne Se Ek Din Ki Hi Ada Hogi, Saari Umr Ki Ada Nahin Hogi

(شرح صحیح مسلم، ج2، ص352)

Saabit Hua Ke Aisi Koi Namaz Nahin Hai Jise Padhne Se Poori Umr Ki Qaza Namaz Ada Ho Jaaye

Ye Jo Namaz Padhi Jaati Hai, Is Ki Koi Asal Nahin Hai, Ye Najayezo Baatil Hai

Abde Mustafa