قلب کو اس کی رویت کی ہے آرزو

حمد باری تعالیٰ

از:… شہزادۂ اعلیٰ حضرت، حضور مفتی اعظم ہند علیہ الرحمہ

اَللّٰہٗ اَللّٰہٗ اَللّٰہٗ اَللّٰہٗ

قلب کو اس کی رویت کی ہے آرزو

جس کا جلوہ ہے عالم میں ہر چار سو

بلکہ خود نفس میں ہے وہ سبحانہٗ

عرش پر ہے مگر عرش کو جستجو

اَللّٰہٗ اَللّٰہٗ اَللّٰہٗ اَللّٰہٗ

عرش و فرش و زمان و جہت اے خدا

جس طرف دیکھتا ہوں ہے جلوہ تِرا

ذرے ذرے کی آنکھوں میں تو ہی ضیا

قطرے قطرے کی تو ہی تو ہے آبرو

اَللّٰہٗ اَللّٰہٗ اَللّٰہٗ اَللّٰہٗ

سارے عالم کو ہے تیری ہی جستجو

جن و انس و ملک کو تِری آرزو

یاد میں تیری ہر ایک ہے کوٗ بکوٗ

بَن میں وَحشی لگاتے ہیں ضَرباتِ ہوٗ

اَللّٰہٗ اَللّٰہٗ اَللّٰہٗ اَللّٰہٗ

نغمہ سنجانِ گلشن میں چرچا تِرا

چہچہے ذکر حق کے ہیں صبح و مسا

اپنی اپنی چہک اپنی اپنی صدا

سبکا مطلب ہے واحد کہ واحد ہے تو

اَللّٰہٗ اَللّٰہٗ اَللّٰہٗ اَللّٰہٗ

طائرانِ جناں میں تِری گفتگو

گیت تیرے ہی گاتے ہیں وہ خوشگُلوٗ

کوئی کہتا ہے حَق کوئی کہتا ہے ہوٗ

اور سب کہتے ہیں لَا شَرِیْکَ لَہٗ

اَللّٰہٗ اَللّٰہٗ اَللّٰہٗ اَللّٰہٗ

ٹھنڈی ٹھنڈی نسیمیں چلیں میرے رب

فتنوں کی دھول سے پاک ہووے عرب

ایسا برسا بہادے جو خاشاک سب

تیری رحمت کے بادل گھریں چار سوٗ

اَللّٰہٗ اَللّٰہٗ اَللّٰہٗ اَللّٰہٗ

خوابِ نوریؔ میں آئیں جو نورِ خدا

بقعۂ نور ہو اپنا ظلمت کدا

جگمگا اٹھے دل چہرہ ہو پُر ضیا

نوریوں کی طرح شغل ہو ذکر ہوٗ

اَللّٰہٗ اَللّٰہٗ اَللّٰہٗ اَللّٰہٗ

جواب دیجئے

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.