کون! امام حسن رضی اللہ تعالی عنہ؟

15 رمضان المبارک, ولادت امام حسن رضی اللہ تعالی عنہ کے حوالے سے ایک مختصر تحریر………

وہ امام حسن رضی اللہ تعالی عنہ جو رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے کندھوں پر سوار ہوں، اور کہنے والا کہے سواری کیسی اچھی ہے تو حضور صلی اللہ علیہ وسلم ارشاد فرمائیں سوار کیسا اچھا ہے……..(ترمذی)

وہ حسن رضی اللہ تعالی عنہ جن کے بارے میں رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا میرا بیٹا سردار ہے یہ مسلمانوں کے دو گروہوں کے درمیان صلح کروائے گا….. (بخاری)

اور وہ صلح یقیناً خلیفۃ المسلمین حضرت امام حسن رضی اللہ تعالی عنہ اور حضرت امیر معاویہ رضی اللہ تعالی عنہ کے درمیان ہوئی اور حضرت امام حسن رضی اللہ تعالی عنہ نے خلافت کی تمام تر ذمہ داریاں حضرت معاویہ کے سپرد فرما دیں، اور پھر بقیہ ساری زندگی امام حسن و حسین رضی اللہ تعالیٰ عنہٗ نے معاویہ رضی اللہ تعالی عنہ کو خلیفہ تسلیم کیا……….( نوٹ. حضرت امیر معاویہ رضی اللہ تعالی عنہ کی خلافت اہل سنت کے نزدیک خلافت راشدہ نہیں ملوکیت یا بادشاہت ہے.)

وہ حسن رضی اللہ تعالی عنہ! حضور سجدے میں ہوں آپ

آ کے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم سے لپٹ جائیں تو میرے آقاسجدہ طویل کر دیں………. (مسند ابو یعلی)

وہ حسن وحسین رضی اللہ تعالی عنہما جن پر صدقہ کھانا حرام ہے……………….. (ترمذی)

مگر کائنات ان کا صدقہ کھاتی ہے……

وہ حسن و حسین جن کے لیے فرمایا جائے میرے دونوں بیٹے جنتی نوجوانوں کے سردار ہیں………. (ترمذی)

وہ حسن و حسین جن کے لیے رسول اللہ نے فرمایا”

ان کا دوست ہمارا دوست، ان کا دشمن ہمارا دشمن…………

(ابن ماجہ)

وہ حسن و حسین جن کے لیے ارشاد نبوی صلی اللہ علیہ وسلم ہو” یہ دونوں عرش کی تلواریں ہیں”…..

(سنن ترمذی)

وہ حسن و حسین رضی اللہ تعالیٰ عنہما وہ پھول ہیں جن کو رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم سونگھا کرتے اور سینے سے لگایا کرتے………… (ترمذی شریف)

وہ حسن و حسین رضی اللہ تعالی عنہما جن کو رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم” اپنی رانوں پر بٹھاتے” ان کو بوسہ دیتے” اور دعا کرتے، الہی میں ان پر رحم کرتا ہوں تو بھی ان پر رحم فرما………… ( صحیح البخاری)

وہ حسن رضی اللہ تعالی عنہ جن کو رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے سینے سے لپٹایا اوردعافرمائی الہی اسے حکمت سکھا دے………. ( صحیح البخاری)

ولادت

رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے نواسے، سیدہ فاطمۃ الزہرا رضی اللہ تعالی عنہا کے پھول، حضرت علی المرتضیٰ شیر خدا رضی اللہ تعالیٰ عنہٗ کی اولاد پاک، امام المسلمین نواسہ رسول حضرت سیدنا امام حسن رضی اللہ تعالی عنہ کا یوم ولادت 15 رمضان المبارک ہے….. اور

شہادت

حلیۃ الاولیاء کی روایت کے مطابق حضرت امام حسن رضی اللہ تعالی عنہ کو زہر دیا گیا جس سے 28 صفر المظفر کو رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کا یہ پھول ( مرتبہ شہادت پا کر) اس دار فانی سے دار آخرت کو منتقل ہوا…..

اناللہ واناالیہ راجعون…..

مگر یہ یاد رہے کہ جب سیدنا امام حسین رضی اللہ تعالی عنہ نے اپنے بھائی امام حسن سے پوچھا؟

کہ میرے بھائی پیارے بھائی آپ کو زہر کس نے دیا؟ فرمایا کہ اگر وہ ہے جو میرے خیال میں ہے، تو اللہ بڑا بدلہ لینے والا ہے اور اگر وہ نہیں تو میں کسی بے گناہ سے بدلہ نہیں چاہتا… (حلیۃ الاولیاء الحسن بن علی)

واللہ اعلم ورسولہ

تحریر:- محمد یعقوب نقشبندی اٹلی