کچھ لوگ کہتے ہیں کہ کتاب کسی بھی مصنف کی ہو

٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭

محترم قارئین کرام : کچھ لوگ کہتے ہیں کہ کتاب کسی بھی مصنف کی ہو ، بیان کسی بھی مقرر کا ہو ، نصیحت کوئی بھی کرے اسے لے لینا چاہیے اور پھر ان میں جو چیزیں اچھی ہوں اسے نکال کر بری باتوں کو چھوڑ دینا چاہیے ، یعنی “سنو سب کی کرو من کی” ۔

یہ بالکل اسلامی تعلیمات کے خلاف ہے کیونکہ نبی کریم صلی اللہ علیہ و آلہ وسلّم نے حضرت عمر فاروق رضی ﷲ تعالٰی عنہ کو یہودیوں کی بات سننے ، لکھنے اور تورات پڑھنے سے روک دیا ۔ (شرح السنۃ، جلد1، صفحہ نمبر219 ) (سنن دارمی، جلد1، صفحہ نمبر126)

معلوم ہوا کہ”سب کی نہیں سننی” اور ہر طرح کی کتابیں نہیں پڑھنی ۔ جب نبی کریم صلی اللہ علیہ و آلہ وسلّم نے حضرت عمر فاروق رضی ﷲ تعالٰی عنہ جیسی ہستی کو منع کر دیا تو پھر ہم کس کھیت کی مولی ہیں ، لہذا ہر سنی مسلمان پر لازم ہے کہ ہر اعتبار سے بدمذہبوں سے دور رہے ۔ (دعا گو ڈاکٹر فیض احمد چشتی)