میرے آقا میرے سلطان مدینے والے

تم پہ سو جان سے قربان مدینے والے

دیکھ کر آپ کے گنبد کا وہ حسیں منظر

نکلے دل کے سبھی ارمان مدینے والے

زائرِ قبرِ منور کی شفاعت ہوگی

ہے یہی آپ کا فرمان مدینے والے

نعت میں لکھتا رہوں نعت فقط پڑھتا رہوں

ہو یہی زیست کا سامان مدینے والے

خدمتِ دین کے جذبے کو سلامت رکھنا

تاکہ بڑھتا رہے ایمان مدینے والے

شاکرِؔ رضوی پہ آقا ہو نگاہِ رحمت

یہ بے چارہ ہے پریشان مدینے والے