جشنِ میلاد

جشنِ میلاد ہم منائیں گے

رب سے صدقہ نبی کا پائیں گے

دور دل کی سیاہی کرنے کو

محفلِ نعت ہم سجائیں گے

آج کی شب ہے رحمتوں

رب کی رحمت میں ہم نہائیں گے

دیکھ کر قبر میں تِرا جلوہ

نعتِ صَلِّ عَلٰی سنائیں گے

مانگ دیوانے ان سے طیبہ کو

صدقے میلاد کے بلائیں گے

پاک کر لے نگاہ اشکوں سے

آقا جلوہ تجھے دکھائیں گے

کاش محشر میں آقا فرما دیں

آجا شاکرؔ تجھے بچائیں گے