رؤیت ہلال پر ابحاث کا تجزیہ

مفتی منیب الرحمن (چیئرمین مرکزی رویت ہلال کمیٹی پاکستان)

روزنامہ جنگ 5جون 2019

بعض حضرات اپنے ذاتی بغض وعناد اور عصبیت کی وجہ سے مرکزی رؤیت ہلال کمیٹی پاکستان کے چیئرمین کی حیثیت سے مجھے ہدفِ تنقید بناتے ہیں،اُن کی اہمیت اس وقت تک ہے جب وہ اینکربن کر اسٹوڈیو زیاکالم نگار بن کر کسی بڑے اخبارکے ادارتی صفحے پر رونق افروز ہوتے ہیں رؤیت ہلال پر ابحاث کا تجزیہ

مفتی منیب الرحمن (چیئرمین مرکزی رویت ہلال کمیٹی پاکستان)

روزنامہ جنگ 5جون 2019

بعض حضرات اپنے ذاتی بغض وعناد اور عصبیت کی وجہ سے مرکزی رؤیت ہلال کمیٹی پاکستان کے چیئرمین کی حیثیت سے مجھے ہدفِ تنقید بناتے ہیں،اُن کی اہمیت اس وقت تک ہے جب وہ اینکربن کر اسٹوڈیو زیاکالم نگار بن کر کسی بڑے اخبارکے ادارتی صفحے پر رونق افروز ہوتے ہیں ،انہیں اپنے بارے میں انتہائی عُجب ،تعلّی اور خوش فہمی ہوتی ہے ،اُن کی سوچ یہ ہوتی ہے کہ دانشِ وفراست کی ہر بات اُن سے شروع ہوتی ہے اور اُن پر جاکر ختم ہوجاتی ہے۔ بزعمِ خویش یہ نادرِ روزگار شخصیت ٹی وی اسٹوڈیوز اور ایڈیٹوریل پیج سے باہر نکل آئیں تو قدروقیمت کا پتاچل جائے گا۔وہ دوسروں کی توہین اور تحقیر میں اپنی بڑائی سمجھتے ہیں ،یہ مسئلہ نفسیاتی اور تربیت کا ہے۔ حدیثِ پاک میں ہے: ”حضرت عمر نے ممبر پر بیٹھ کر ارشاد فرمایا:اے لوگو! عاجزی اختیار کرو ،کیونکہ میں نے رسول اللہ ؐ کو فرماتے ہوئے سنا :جس نے اللہ کے لیے عاجزی اختیار کی ،اللہ اُسے سربلند فرمائے گا، وہ اپنے آپ کو اپنے دل میں چھوٹا سمجھے گا ،لیکن وہ لوگوں کی نظر میں عظیم ہوگا اور جس نے تکبر کیا ،اللہ اُسے پست کردے گا،پس وہ لوگوں کی نظر میں حقیر ہوگا ،جبکہ وہ دل میں اپنے آپ کوبڑا سمجھے گا،وہ کتے اور خنزیر سے بھی زیادہ بے توقیر ہوگا، (شعب الایمان:8140)”۔

ایک صاحب لکھتے ہیں: چیئرمین متنازع ہیں، اُن سے سوال ہے کہ اُن سمیت پاکستان میں کون ایسا شخص ہے جس سے کسی کو اختلاف نہ ہو ،لیکن میں اللہ تعالیٰ کا شکر گزار ہوں :پاکستان میں دینی مدارس وجامعات کی پانچ ملک گیر تنظیمات کے الائنس ” اتحادِ تنظیماتِ مدارس پاکستان” کامیں سیکرٹری جنرل یعنی امینِ عام ہوں ،تنظیم المدارس اہلسنت پاکستان کا صدر ہوں۔ مرکزی رؤیت ہلال کمیٹی پاکستان میں تمام مکاتبِ فکر کے جیّد علماء موجود ہیں،مولانا قاری محمد حنیف جالندھری (ناظم اعلیٰ وفاق المدارس العربیہ پاکستان)، مولانا یاسین ظفر(ناظم اعلیٰ وفاق المدارس السلفیہ پاکستان)، علامہ افتخار حسین نقوی (رکن اسلامی نظریاتی کونسل پاکستان)، مفتی محمد ابراہیم قادری (آپ دو مرتبہ اسلامی نظریاتی کونسل پاکستان کے رُکن رہ چکے ہیں اور اُس وقت کے چیئرمین مولانا محمد خان شیرانی نے ٹی وی پر اُن کی علمی فضیلت کا اعتراف کیا )، شاہی مسجد لاہور کے خطیب مولانا عبدالخبیر آزاد اور دیگر ممتازعلماء شامل ہیں۔ حال ہی میں مکہئ مکرمہ میں رابطہ عالَمِ اسلامی کے اجلاس کے موقع پر پاکستان سے آئے ہوئے ممتاز علماء نے ایک مجلس میں مجھ سے کہا:” ہم سب آپ کے ساتھ ہیں ،ہمیں آپ کے فیصلوں پر اعتماد ہے ،حتیٰ کہ مقبوضہ کشمیر سے آئے ہوئے علماء نے کہا: ہم رمضان المبارک اور عید الفطر آپ کے اعلان کے مطابق کرتے ہیں ”۔نیز پورا صوبہئ پنجاب ،صوبہئ سندھ ،صوبہئ بلوچستان ،صوبہئ خیبرپختونخوا کا بڑا حصہ مرکزی رؤیت ہلال کمیٹی پاکستان کے فیصلوں پر عمل کرتا ہے ، یہ روشن حقیقت دیدہئ کور کو نظر نہیں آتی ۔اتحادِ تنظیماتِ مدارس پاکستان کی قیادت ہمارے فیصلوں کی پشت پرہے ،قومی ودینی اتفاق کا اس سے کوئی بڑا مظہر ہوتو بتائیں ۔

نیزفیصلہ پوری مرکزی رؤیت ہلال کمیٹی پاکستان کے اتفاقِ رائے سے ہوتا ہے ،چیئرمین یا کسی شخصِ واحد کا نہیں ہوتا ، پوری کمیٹی اس کی مؤیّد اور کسٹوڈین ہے۔ آپ اسٹوڈیوز میں بیٹھ کر یا اخبارات کے کالموں میں اپنی مرضی سے جو مفروضے چاہیں قائم کریں، فلسفے تراشیں، زمینی حقیقت یہی ہے۔

ہمارے ان لبرل عناصر کی ایک نفسیاتی بیماری یہ ہے کہ خود کو علم کے میدان میں شیخ الکل اور علماء کو علم سے عاری سمجھتے ہیں اور یہ کہ جدید سائنسی دنیا سے علماء نابلد ہیں یا اُسے اہمیت نہیں دیتے، وہ اپنا مَبلغِ علم تو بتائیں کہ اُن کے پاس کون سی ایسی ڈگری ہے جس تک ہماری رسائی نہیں ہے ۔علمی اور فکری خیانت اور ریٹنگ کے مرض کی نشاندہی کے لیے اتنا ہی کافی ہے کہ ایک فرد کو قومی ادارے کے مقابل لاکر کھڑا کردیتے ہیں اور بناوٹی انداز میں حب الوطنی کا راگ الاپتے ہیں ۔

ایک قابلِ احترام بزرگ نے لکھا:نمازوں کے نقشے کسی وفاق المدارس نے بنائے ہیں ،اُن کی خدمت میں گزارش ہے : نمازوں کے نقشے آج کی بات نہیں ہے ،یہ سوسال سے چلے آرہے ہیں اور علماء ہی نے ترتیب دیے تھے ،ہمارے اداروں میں علم التوقیت کے کورس آج بھی پڑھائے جاتے ہیں اورماضی میں بھی تھے ۔جامعۃ الرشیدمیں شعبہئ فلکیات موجود ہے اور فیضانِ مدینہ میں بھی توقیت کا شعبہ کام کر رہا ہے ۔ ایک صاحبِ علم اور پاکستان اٹامک انرجی کمیشن سے وابستہ مولانا شبیراحمد کاکاخیل دیوبندی مکتبِ فکر کی بڑی بڑی جامعات میں فلکیات کے کورسز کراتے رہے ہیں۔اہلسنت کے پاکستان بھرکے مدارس میںہمارے ایک فاضل ماہرِتوقیت علامہ محمد عرفان رضوی سال بھر کورسز کراتے رہتے ہیں اور ماہرین نے اُن کی طرزِ تدریس اور شعبے میں علمی ثقاہت کو سراہا ہے ، ہمارے اداروں کے ماہرین نئی مساجد کے لیے سَمتِ قبلہ کا بھی تعیُّن کرتے ہیں ۔جامعہ اشرفیہ لاہور کے ایک استاذِ حدیث علامہ محمدموسیٰ روحانی بازی کی قدیم وجدیدفلکیات پر کتاب موجود ہے۔

ایک صاحب نے لکھا: سائنس کی معلومات قطعی ہیں اور شہادت ظنی ،یہ دعویٰ جزوی طور پر درست ہوسکتا ہے ،سو فیصد نہیں ، ورنہ وہ اعلیٰ عدالتیں جو شہادات کی بنیاد پر سزائے موت نافذ کرتی ہیں، مطعون قرار پائیں گی کہ محض ظنی بنیاد پر کسی کی جان لے لی گئی۔ ہمارے ہاں چند برس پہلے لبرل میڈیا پر بڑا شور مچا تھا کہ ڈی این اے کو ثبوتِ جرم کے لیے قطعی حجت کیوں نہیں مانا جاتا ، تو میں نے امریکہ اور جرمنی کی عدالتوں کے شواہد پیش کیے تھے کہ انہوں نے ڈی این اے کو قطعی ثبوت ماننے سے انکار کردیا اور کہا :اگرتینتالیس بلین ٹریلین کے مقابلے میں ایک کے تناسب سے بھی شبہ پیدا ہوجائے تو سزائے موت جاری نہیں کی جائے گی ،اسی حقیقت کو دانشِ نبوت نے آج سے چودہ سو سال قبل ایک جملے میں بیان کردیا تھا:”حدودکو شبہات سے ساقط کردو،(حلیۃ الاولیاء،ج:9،ص:10)”۔

سائنسی اعتبار سے چاند کے بارے میں چند امور قطعی ہیں :(1)سورج اور چاند کی حرکت ،دونوں کا طلوع وغروب، یہ ”اَلشَّمْسُ وَالْقَمَرُ بِحُسْبَان”سے بھی ثابت ہے ۔یہ ماہرینِ فلکیات کا صدیوں کا مشاہدہ ہے اور انہی مشاہدات میں تطبیق کر کے کلیات ترتیب دیے جاتے ہیں ،مسلمان ماہرینِ فلکیات نے ،ماہرینِ ریاضی وفزکس نے ان علوم میں کمال پیدا کر کے ”اُسطرلاب ” نامی آلہ ایجاد کیا تھا، جس سے سورج اور چاند کی چال، اُن کے طلوع وغروب کے اوقات اور نمازوںکے اوقات معلوم کیے جاتے تھے۔ قدیم وجدید فلکیات کی نصابی کتب میں ان کا تذکرہ ملتا ہے ،مثلاً: نئے چاند کا بننا ،چاند کا بڑھنا، پورے چاند کا بننا، چاند کا گھٹنا ، چاند کا نظر نہ آنا، سورج گرہن ،چاند گرہن اور طلوع وغروب وغیرہ ۔آج کل اُسطرلاب کی جگہ سوفٹ ویئرز اور موبائل اپلیکیشنز نے لے لی ہے،چاند کے حوالے سے مندرجہ بالا امور قطعی ہیں۔

لیکن نیا چاند کب قابلِ رؤیت ہوتا ہے ،فلکیات کی تمام قدیم وجدیدنصابی کتابوں میں یہ بحث نہیں ہے،جدید دور میں بھی ماہرینِ فلکیات چاند کی رویت کے بارے میں (خاص طور پرجب کہ امکانات ففٹی ففٹی ہوں)قطعی معلومات دینے سے قاصر ہیں۔ آج بھی اس کے بارے میں کم از کم بیس سے زائد معیارات مختلف ماہرین نے بیان کیے ہیں ،کسی ایک معیار کو تمام ماہرین کے نزدیک مکمل طور پر متفق علیہ یا مُجْمَعْ عَلَیہ قرار نہیں دیاجاسکتا،انہوں نے اپنے مشاہدات اور تجربات کی روشنی میں آراء قائم کی ہیں۔ اسی لیے رؤیتِ بصری کی اہمیت کو کسی طور پر بھی نظر انداز نہیں کیاجاسکتا۔ ماہرِ فلکیات ڈاکٹر شاہد قریشی نے ایک چینل پرکہا: ”ہم سائنسی بنیادوں پر چاند کی رؤیت کا کوئی قطعی کیلنڈر نہیں بناسکتے، ہم امکانِ رؤیت کی نشاندہی کرسکتے ہیں ،حتمی بات نہیں کرسکتے”۔

جہاں تک ملائیشیا ،ترکی یا اسلامک سوسائٹی آف نارتھ امریکہ کے رمضان اور عیدین کے بارے میں پیشگی کیلنڈر کا تعلق ہے، اُس کا مدار رؤیت پر نہیں ہے، اس لیے وہ پوری امت کے علماء کے درمیان متفق علیہ نہیں ہے ، اسی بنا پر اسلامک سوسائٹی آف نارتھ امریکہ تقسیم ہوئی اور اس کے بطن سے اسلامک کونسل آف نارتھ امریکہ وجود میں آئی ۔ جو علماء رؤیتِ بصری پر اپنے فیصلوں کا مدار رکھتے ہیں ،وہ برطانیہ اور یورپ میں ہوں یا امریکہ میں ،وہ ان کیلنڈروں پر عمل نہیں کرتے ،بلکہ حقیقی رؤیت پر مبنی فیصلے کرتے ہیں۔ ہمارے کالم نگار بڑے عالم فاضل سہی، لیکن برصغیر کے تمام ممالک اور بعض دیگر مسلم ممالک(جن میں مراکش اور عمّان شامل ہیں) میں اس طرح کے کیلنڈر قابلِ عمل اور قابلِ نفاذ نہیں ہیں۔ ہمارے ملک میں انتہائی محدود تعداد میں کچھ لوگ علامہ غامدی صاحب کی فکر کے حامل ہیں کہ حدیث میں رؤیت کو علم کے معنی میں لیا جائے اور اگر سائنسی طور پر معلوم ہوجائے کہ چاند غروبِ آفتاب کے بعد مطلع پر موجود تھا ،خواہ چند منٹ ہی سہی اور چاہے کسی بھی حالت میں قابلِ رؤیت نہ ہو ،اُسے موجود مان کر رمضان المبارک اور عید کا آغاز کردیا جائے ۔رؤیتِ ہلال کے نظام پر بات کرنے والے لبرلز اسی نظریے کے حامی ہیں ،انہیں روزہ اور عبادات سے چنداں غرض نہیں ہوتی ، بس اس امر میں دلچسپی ہوتی ہے کہ ایک قومی تہوار کے طور پر عید ایک دن ہوجائے۔ انہیں معلوم ہونا چاہیے کہ رمضان اور عیدالفطر کا آغاز قومی تہوار نہیں ہیں، یہ اللہ تعالیٰ کی طرف سے مقرر کردہ عبادات ہیں اور عباداتِ الٰہیہ شرعی شرائط کے مطابق ادا کی جاتی ہیں ، خواہشات یا نت نئے فارمولوں کے تحت یہ کام نہیں ہوسکتا، ورنہ کل کلاں ایسے متجدّدین بھی آئیں گے جو کہیں گے: شدید گرمی میں روزہ چھوڑ دیا جائے اور فدیے پر اکتفا کی جائے، اس سے غریبوں کا بھلا ہوگا یا روزے کے دورانیے کو کم کردیا جائے ،عقلِ عیّار تو یہی کچھ سکھاتی ہے، لیکن الحمد للہ علیٰ احسانہٖ! مسلمانوں میں اپنے دین ومذہب کے حوالے سے اتنی پستی ابھی نہیں آئی اور مستقبلِ قریب میں بھی اس کے آثار نہیں ہیں، ان شاء اللہ تعالیٰ ۔

تکرار کے ساتھ ایک طنز کیا جاتا ہے کہ دنیا چاند پر پہنچ گئی ہے اور یہ مذہبی لوگ ابھی تک چاند کے نظر آنے یا نہ آنے پر بحث میں الجھے ہوئے ہیں، اس سے تو یہ تاثر پیدا ہوتا ہے کہ ساری جدید سائنسی ،فنی اور فلکیاتی ترقی کی راہ میں اگرکوئی رکاوٹ ہے تو وہ ہے:”مرکزی رؤیت ہلال کمیٹی پاکستان” ، اسے ختم کردیا جائے تو ہم اقوامِ عالم کو پیچھے چھوڑ کر چاند اور دیگر سیاروں سے بھی آگے نکل جائیںگے ، بس صرف اس رکاوٹ کے دور ہونے کی دیر ہے، کتنا آسان نسخہ ہے سائنسی ترقی کااور کتنی نادان ہے یہ قوم!یہ معرکہ تو بہت پہلے سَر ہوجانا چاہیے تھا، غالب نے کہا تھا:

اس سادگی پہ کون نہ مرجائے اے خدا! لڑتے ہیں اور ہاتھ میں تلوار بھی نہیں

ہم تو 1950کے عشرے سے جنتریاں دیکھتے چلے آرہے ہیں ،جن میں قمری ،شمسی اور بکرمی تقویم کی تاریخیں لکھی ہوتی تھیں، جنابِ فواد چودھری بڑے عظیم ہیں کہ وہ آج قمری کیلنڈر ایجاد کرنے کا کارنامہ انجام دے رہے ہیں ۔میری حکومتِ پاکستان کو تجویز ہے کہ اُن کا نام طبیعیات کے نوبیل پرائز کے لیے سویڈن بھیجا جائے ،نیز اخبارات سے معلوم ہوا تھا کہ آئندہ دو سال میں چینی خلائی جہاز میں ایک پاکستانی خلاباز کوبھی چاند پر بھیجا جائے گا، اُس کے لیے بھی جنابِ فواد چودھری کی شخصیت نہایت موزوں رہے گی ،بلکہ ان کو اگر مستقل وہیں بسادیا جائے تو زمین والوں کی خیر ہوگی۔

نوٹ(1): مسجد قاسم علی خان کا پاکستان کے نظامِ رؤیت ہلال سے اختلاف آج کی بات نہیں ہے، یہ قیامِ پاکستان سے چلا آرہا ہے، 1958کے ایک اخبار کا تراشہ منسلک ہے، اُس وقت بھی یہ اختلاف موجود تھا اور مسلسل رہا ہے، یہ آج کی یا صرف میرے دور کی بات نہیں ہے،اگر آج اس کی ذمے داری مجھ پر عائد کی جارہی ہے تو قیامِ پاکستان سے لے کر2000تک اس کی ذمے داری کس پر عائد ہوگی، اس کا ایک ہی حل ہے:جنابِ مفتی شہاب الدین پوپلزئی کو اس انحرافی روش سے روکا جائے ۔

نوٹ(2):ڈائرکٹر جنرل محکمہ اوقاف پنجاب ڈاکٹر طاہر رضا بخاری نے اپنے کالم میں لکھا ہے:”چند سال پہلے ہم نے مفتی منیب الرحمن اور مولانا قاری محمد حنیف جالندھری کو جہاز کے ذریعے بھیجا”، اس سے یہ تاثر پیدا ہوتا ہے کہ یہ انتظام پنجاب گورنمنٹ کی طرف سے تھا، یہ درست نہیں ہے۔ یہ میاں منیر صاحب کی طرف سے علماء کے ساتھ ایک حسنِ سلوک تھا اور سراسر نجی انتظام تھا، اگر یہ پنجاب گورنمنٹ کی طرف سے ہو تو بتایا جائے کہ اس کی ادائیگی کس نے کی، کس کو کی اور کہاں سے کی۔،انہیں اپنے بارے میں انتہائی عُجب ،تعلّی اور خوش فہمی ہوتی ہے ،اُن کی سوچ یہ ہوتی ہے کہ دانشِ وفراست کی ہر بات اُن سے شروع ہوتی ہے اور اُن پر جاکر ختم ہوجاتی ہے۔ بزعمِ خویش یہ نادرِ روزگار شخصیت ٹی وی اسٹوڈیوز اور ایڈیٹوریل پیج سے باہر نکل آئیں تو قدروقیمت کا پتاچل جائے گا۔وہ دوسروں کی توہین اور تحقیر میں اپنی بڑائی سمجھتے ہیں ،یہ مسئلہ نفسیاتی اور تربیت کا ہے۔ حدیثِ پاک میں ہے: ”حضرت عمر نے ممبر پر بیٹھ کر ارشاد فرمایا:اے لوگو! عاجزی اختیار کرو ،کیونکہ میں نے رسول اللہ ؐ کو فرماتے ہوئے سنا :جس نے اللہ کے لیے عاجزی اختیار کی ،اللہ اُسے سربلند فرمائے گا، وہ اپنے آپ کو اپنے دل میں چھوٹا سمجھے گا ،لیکن وہ لوگوں کی نظر میں عظیم ہوگا اور جس نے تکبر کیا ،اللہ اُسے پست کردے گا،پس وہ لوگوں کی نظر میں حقیر ہوگا ،جبکہ وہ دل میں اپنے آپ کوبڑا سمجھے گا،وہ کتے اور خنزیر سے بھی زیادہ بے توقیر ہوگا، (شعب الایمان:8140)”۔

ایک صاحب لکھتے ہیں: چیئرمین متنازع ہیں، اُن سے سوال ہے کہ اُن سمیت پاکستان میں کون ایسا شخص ہے جس سے کسی کو اختلاف نہ ہو ،لیکن میں اللہ تعالیٰ کا شکر گزار ہوں :پاکستان میں دینی مدارس وجامعات کی پانچ ملک گیر تنظیمات کے الائنس ” اتحادِ تنظیماتِ مدارس پاکستان” کامیں سیکرٹری جنرل یعنی امینِ عام ہوں ،تنظیم المدارس اہلسنت پاکستان کا صدر ہوں۔ مرکزی رؤیت ہلال کمیٹی پاکستان میں تمام مکاتبِ فکر کے جیّد علماء موجود ہیں،مولانا قاری محمد حنیف جالندھری (ناظم اعلیٰ وفاق المدارس العربیہ پاکستان)، مولانا یاسین ظفر(ناظم اعلیٰ وفاق المدارس السلفیہ پاکستان)، علامہ افتخار حسین نقوی (رکن اسلامی نظریاتی کونسل پاکستان)، مفتی محمد ابراہیم قادری (آپ دو مرتبہ اسلامی نظریاتی کونسل پاکستان کے رُکن رہ چکے ہیں اور اُس وقت کے چیئرمین مولانا محمد خان شیرانی نے ٹی وی پر اُن کی علمی فضیلت کا اعتراف کیا )، شاہی مسجد لاہور کے خطیب مولانا عبدالخبیر آزاد اور دیگر ممتازعلماء شامل ہیں۔ حال ہی میں مکہئ مکرمہ میں رابطہ عالَمِ اسلامی کے اجلاس کے موقع پر پاکستان سے آئے ہوئے ممتاز علماء نے ایک مجلس میں مجھ سے کہا:” ہم سب آپ کے ساتھ ہیں ،ہمیں آپ کے فیصلوں پر اعتماد ہے ،حتیٰ کہ مقبوضہ کشمیر سے آئے ہوئے علماء نے کہا: ہم رمضان المبارک اور عید الفطر آپ کے اعلان کے مطابق کرتے ہیں ”۔نیز پورا صوبہئ پنجاب ،صوبہئ سندھ ،صوبہئ بلوچستان ،صوبہئ خیبرپختونخوا کا بڑا حصہ مرکزی رؤیت ہلال کمیٹی پاکستان کے فیصلوں پر عمل کرتا ہے ، یہ روشن حقیقت دیدہئ کور کو نظر نہیں آتی ۔اتحادِ تنظیماتِ مدارس پاکستان کی قیادت ہمارے فیصلوں کی پشت پرہے ،قومی ودینی اتفاق کا اس سے کوئی بڑا مظہر ہوتو بتائیں ۔

نیزفیصلہ پوری مرکزی رؤیت ہلال کمیٹی پاکستان کے اتفاقِ رائے سے ہوتا ہے ،چیئرمین یا کسی شخصِ واحد کا نہیں ہوتا ، پوری کمیٹی اس کی مؤیّد اور کسٹوڈین ہے۔ آپ اسٹوڈیوز میں بیٹھ کر یا اخبارات کے کالموں میں اپنی مرضی سے جو مفروضے چاہیں قائم کریں، فلسفے تراشیں، زمینی حقیقت یہی ہے۔

ہمارے ان لبرل عناصر کی ایک نفسیاتی بیماری یہ ہے کہ خود کو علم کے میدان میں شیخ الکل اور علماء کو علم سے عاری سمجھتے ہیں اور یہ کہ جدید سائنسی دنیا سے علماء نابلد ہیں یا اُسے اہمیت نہیں دیتے، وہ اپنا مَبلغِ علم تو بتائیں کہ اُن کے پاس کون سی ایسی ڈگری ہے جس تک ہماری رسائی نہیں ہے ۔علمی اور فکری خیانت اور ریٹنگ کے مرض کی نشاندہی کے لیے اتنا ہی کافی ہے کہ ایک فرد کو قومی ادارے کے مقابل لاکر کھڑا کردیتے ہیں اور بناوٹی انداز میں حب الوطنی کا راگ الاپتے ہیں ۔

ایک قابلِ احترام بزرگ نے لکھا:نمازوں کے نقشے کسی وفاق المدارس نے بنائے ہیں ،اُن کی خدمت میں گزارش ہے : نمازوں کے نقشے آج کی بات نہیں ہے ،یہ سوسال سے چلے آرہے ہیں اور علماء ہی نے ترتیب دیے تھے ،ہمارے اداروں میں علم التوقیت کے کورس آج بھی پڑھائے جاتے ہیں اورماضی میں بھی تھے ۔جامعۃ الرشیدمیں شعبہئ فلکیات موجود ہے اور فیضانِ مدینہ میں بھی توقیت کا شعبہ کام کر رہا ہے ۔ ایک صاحبِ علم اور پاکستان اٹامک انرجی کمیشن سے وابستہ مولانا شبیراحمد کاکاخیل دیوبندی مکتبِ فکر کی بڑی بڑی جامعات میں فلکیات کے کورسز کراتے رہے ہیں۔اہلسنت کے پاکستان بھرکے مدارس میںہمارے ایک فاضل ماہرِتوقیت علامہ محمد عرفان رضوی سال بھر کورسز کراتے رہتے ہیں اور ماہرین نے اُن کی طرزِ تدریس اور شعبے میں علمی ثقاہت کو سراہا ہے ، ہمارے اداروں کے ماہرین نئی مساجد کے لیے سَمتِ قبلہ کا بھی تعیُّن کرتے ہیں ۔جامعہ اشرفیہ لاہور کے ایک استاذِ حدیث علامہ محمدموسیٰ روحانی بازی کی قدیم وجدیدفلکیات پر کتاب موجود ہے۔

ایک صاحب نے لکھا: سائنس کی معلومات قطعی ہیں اور شہادت ظنی ،یہ دعویٰ جزوی طور پر درست ہوسکتا ہے ،سو فیصد نہیں ، ورنہ وہ اعلیٰ عدالتیں جو شہادات کی بنیاد پر سزائے موت نافذ کرتی ہیں، مطعون قرار پائیں گی کہ محض ظنی بنیاد پر کسی کی جان لے لی گئی۔ ہمارے ہاں چند برس پہلے لبرل میڈیا پر بڑا شور مچا تھا کہ ڈی این اے کو ثبوتِ جرم کے لیے قطعی حجت کیوں نہیں مانا جاتا ، تو میں نے امریکہ اور جرمنی کی عدالتوں کے شواہد پیش کیے تھے کہ انہوں نے ڈی این اے کو قطعی ثبوت ماننے سے انکار کردیا اور کہا :اگرتینتالیس بلین ٹریلین کے مقابلے میں ایک کے تناسب سے بھی شبہ پیدا ہوجائے تو سزائے موت جاری نہیں کی جائے گی ،اسی حقیقت کو دانشِ نبوت نے آج سے چودہ سو سال قبل ایک جملے میں بیان کردیا تھا:”حدودکو شبہات سے ساقط کردو،(حلیۃ الاولیاء،ج:9،ص:10)”۔

سائنسی اعتبار سے چاند کے بارے میں چند امور قطعی ہیں :(1)سورج اور چاند کی حرکت ،دونوں کا طلوع وغروب، یہ ”اَلشَّمْسُ وَالْقَمَرُ بِحُسْبَان”سے بھی ثابت ہے ۔یہ ماہرینِ فلکیات کا صدیوں کا مشاہدہ ہے اور انہی مشاہدات میں تطبیق کر کے کلیات ترتیب دیے جاتے ہیں ،مسلمان ماہرینِ فلکیات نے ،ماہرینِ ریاضی وفزکس نے ان علوم میں کمال پیدا کر کے ”اُسطرلاب ” نامی آلہ ایجاد کیا تھا، جس سے سورج اور چاند کی چال، اُن کے طلوع وغروب کے اوقات اور نمازوںکے اوقات معلوم کیے جاتے تھے۔ قدیم وجدید فلکیات کی نصابی کتب میں ان کا تذکرہ ملتا ہے ،مثلاً: نئے چاند کا بننا ،چاند کا بڑھنا، پورے چاند کا بننا، چاند کا گھٹنا ، چاند کا نظر نہ آنا، سورج گرہن ،چاند گرہن اور طلوع وغروب وغیرہ ۔آج کل اُسطرلاب کی جگہ سوفٹ ویئرز اور موبائل اپلیکیشنز نے لے لی ہے،چاند کے حوالے سے مندرجہ بالا امور قطعی ہیں۔

لیکن نیا چاند کب قابلِ رؤیت ہوتا ہے ،فلکیات کی تمام قدیم وجدیدنصابی کتابوں میں یہ بحث نہیں ہے،جدید دور میں بھی ماہرینِ فلکیات چاند کی رویت کے بارے میں (خاص طور پرجب کہ امکانات ففٹی ففٹی ہوں)قطعی معلومات دینے سے قاصر ہیں۔ آج بھی اس کے بارے میں کم از کم بیس سے زائد معیارات مختلف ماہرین نے بیان کیے ہیں ،کسی ایک معیار کو تمام ماہرین کے نزدیک مکمل طور پر متفق علیہ یا مُجْمَعْ عَلَیہ قرار نہیں دیاجاسکتا،انہوں نے اپنے مشاہدات اور تجربات کی روشنی میں آراء قائم کی ہیں۔ اسی لیے رؤیتِ بصری کی اہمیت کو کسی طور پر بھی نظر انداز نہیں کیاجاسکتا۔ ماہرِ فلکیات ڈاکٹر شاہد قریشی نے ایک چینل پرکہا: ”ہم سائنسی بنیادوں پر چاند کی رؤیت کا کوئی قطعی کیلنڈر نہیں بناسکتے، ہم امکانِ رؤیت کی نشاندہی کرسکتے ہیں ،حتمی بات نہیں کرسکتے”۔

جہاں تک ملائیشیا ،ترکی یا اسلامک سوسائٹی آف نارتھ امریکہ کے رمضان اور عیدین کے بارے میں پیشگی کیلنڈر کا تعلق ہے، اُس کا مدار رؤیت پر نہیں ہے، اس لیے وہ پوری امت کے علماء کے درمیان متفق علیہ نہیں ہے ، اسی بنا پر اسلامک سوسائٹی آف نارتھ امریکہ تقسیم ہوئی اور اس کے بطن سے اسلامک کونسل آف نارتھ امریکہ وجود میں آئی ۔ جو علماء رؤیتِ بصری پر اپنے فیصلوں کا مدار رکھتے ہیں ،وہ برطانیہ اور یورپ میں ہوں یا امریکہ میں ،وہ ان کیلنڈروں پر عمل نہیں کرتے ،بلکہ حقیقی رؤیت پر مبنی فیصلے کرتے ہیں۔ ہمارے کالم نگار بڑے عالم فاضل سہی، لیکن برصغیر کے تمام ممالک اور بعض دیگر مسلم ممالک(جن میں مراکش اور عمّان شامل ہیں) میں اس طرح کے کیلنڈر قابلِ عمل اور قابلِ نفاذ نہیں ہیں۔ ہمارے ملک میں انتہائی محدود تعداد میں کچھ لوگ علامہ غامدی صاحب کی فکر کے حامل ہیں کہ حدیث میں رؤیت کو علم کے معنی میں لیا جائے اور اگر سائنسی طور پر معلوم ہوجائے کہ چاند غروبِ آفتاب کے بعد مطلع پر موجود تھا ،خواہ چند منٹ ہی سہی اور چاہے کسی بھی حالت میں قابلِ رؤیت نہ ہو ،اُسے موجود مان کر رمضان المبارک اور عید کا آغاز کردیا جائے ۔رؤیتِ ہلال کے نظام پر بات کرنے والے لبرلز اسی نظریے کے حامی ہیں ،انہیں روزہ اور عبادات سے چنداں غرض نہیں ہوتی ، بس اس امر میں دلچسپی ہوتی ہے کہ ایک قومی تہوار کے طور پر عید ایک دن ہوجائے۔ انہیں معلوم ہونا چاہیے کہ رمضان اور عیدالفطر کا آغاز قومی تہوار نہیں ہیں، یہ اللہ تعالیٰ کی طرف سے مقرر کردہ عبادات ہیں اور عباداتِ الٰہیہ شرعی شرائط کے مطابق ادا کی جاتی ہیں ، خواہشات یا نت نئے فارمولوں کے تحت یہ کام نہیں ہوسکتا، ورنہ کل کلاں ایسے متجدّدین بھی آئیں گے جو کہیں گے: شدید گرمی میں روزہ چھوڑ دیا جائے اور فدیے پر اکتفا کی جائے، اس سے غریبوں کا بھلا ہوگا یا روزے کے دورانیے کو کم کردیا جائے ،عقلِ عیّار تو یہی کچھ سکھاتی ہے، لیکن الحمد للہ علیٰ احسانہٖ! مسلمانوں میں اپنے دین ومذہب کے حوالے سے اتنی پستی ابھی نہیں آئی اور مستقبلِ قریب میں بھی اس کے آثار نہیں ہیں، ان شاء اللہ تعالیٰ ۔

تکرار کے ساتھ ایک طنز کیا جاتا ہے کہ دنیا چاند پر پہنچ گئی ہے اور یہ مذہبی لوگ ابھی تک چاند کے نظر آنے یا نہ آنے پر بحث میں الجھے ہوئے ہیں، اس سے تو یہ تاثر پیدا ہوتا ہے کہ ساری جدید سائنسی ،فنی اور فلکیاتی ترقی کی راہ میں اگرکوئی رکاوٹ ہے تو وہ ہے:”مرکزی رؤیت ہلال کمیٹی پاکستان” ، اسے ختم کردیا جائے تو ہم اقوامِ عالم کو پیچھے چھوڑ کر چاند اور دیگر سیاروں سے بھی آگے نکل جائیںگے ، بس صرف اس رکاوٹ کے دور ہونے کی دیر ہے، کتنا آسان نسخہ ہے سائنسی ترقی کااور کتنی نادان ہے یہ قوم!یہ معرکہ تو بہت پہلے سَر ہوجانا چاہیے تھا، غالب نے کہا تھا:

اس سادگی پہ کون نہ مرجائے اے خدا! لڑتے ہیں اور ہاتھ میں تلوار بھی نہیں

ہم تو 1950کے عشرے سے جنتریاں دیکھتے چلے آرہے ہیں ،جن میں قمری ،شمسی اور بکرمی تقویم کی تاریخیں لکھی ہوتی تھیں، جنابِ فواد چودھری بڑے عظیم ہیں کہ وہ آج قمری کیلنڈر ایجاد کرنے کا کارنامہ انجام دے رہے ہیں ۔میری حکومتِ پاکستان کو تجویز ہے کہ اُن کا نام طبیعیات کے نوبیل پرائز کے لیے سویڈن بھیجا جائے ،نیز اخبارات سے معلوم ہوا تھا کہ آئندہ دو سال میں چینی خلائی جہاز میں ایک پاکستانی خلاباز کوبھی چاند پر بھیجا جائے گا، اُس کے لیے بھی جنابِ فواد چودھری کی شخصیت نہایت موزوں رہے گی ،بلکہ ان کو اگر مستقل وہیں بسادیا جائے تو زمین والوں کی خیر ہوگی۔

نوٹ(1): مسجد قاسم علی خان کا پاکستان کے نظامِ رؤیت ہلال سے اختلاف آج کی بات نہیں ہے، یہ قیامِ پاکستان سے چلا آرہا ہے، 1958کے ایک اخبار کا تراشہ منسلک ہے، اُس وقت بھی یہ اختلاف موجود تھا اور مسلسل رہا ہے، یہ آج کی یا صرف میرے دور کی بات نہیں ہے،اگر آج اس کی ذمے داری مجھ پر عائد کی جارہی ہے تو قیامِ پاکستان سے لے کر2000تک اس کی ذمے داری کس پر عائد ہوگی، اس کا ایک ہی حل ہے:جنابِ مفتی شہاب الدین پوپلزئی کو اس انحرافی روش سے روکا جائے ۔

نوٹ(2):ڈائرکٹر جنرل محکمہ اوقاف پنجاب ڈاکٹر طاہر رضا بخاری نے اپنے کالم میں لکھا ہے:”چند سال پہلے ہم نے مفتی منیب الرحمن اور مولانا قاری محمد حنیف جالندھری کو جہاز کے ذریعے بھیجا”، اس سے یہ تاثر پیدا ہوتا ہے کہ یہ انتظام پنجاب گورنمنٹ کی طرف سے تھا، یہ درست نہیں ہے۔ یہ میاں منیر صاحب کی طرف سے علماء کے ساتھ ایک حسنِ سلوک تھا اور سراسر نجی انتظام تھا، اگر یہ پنجاب گورنمنٹ کی طرف سے ہو تو بتایا جائے کہ اس کی ادائیگی کس نے کی، کس کو کی اور کہاں سے کی۔