روح کا جسم کیساتھ تعلق

روح کا جسم کیساتھ تعلق :

عقیدہ :مسلمانوں کی روحیں اپنے مرتبہ کے مطابق مختلف مقامات میں رہتی ہیں بعض کی قبر میں ،بعض کی چاہ زمزم میں ،بعض کی زمین و آسمان کے درمیان ،بعض کی پہلے سے ساتویں آسمان تک ،بعض کی آسمانوں سے بھی بلند ،بعض کی زیر عرش قند یلوں میں اور بعض کی اعلیٰ علییّن میں ،مگر روحیں کہیں بھی ہوں انکا اپنے جسم سے تعلق بد ستور قائم رہتا ہے جو انکی قبر پر آئے وہ اسے دیکھتے ،پہچا نتے اور اسکا کلام سنتے ہیں بلکہ روح کا دیکھنا قبر ہی سے مخصوص نہیں،اسکی مثال حدیث شریف میں یوں بیان کی ہوئی ہے کہ ایک پرندہ پہلے قفس میں بند تھا اور اب آزاد کر دیا گیا ۔ائمہ کرام فرماتے ہیں،بیشک جب پاک جانیں بدن کے علاقوں سے جدا ہوتی ہیں تو عالم بالا سے مل جاتی ہیں اور سب کچھ ایسا دیکھتی سنتی ہیں ۔جیسے یہاں حاضر ہیں ۔حدیث پاک میں ارشاد ہوا ،جب مسلمان مرتا ہے تو اسکی راہ کھول دی جاتی ہے وہ جہاں چاہے جائے ۔

کافروں کی بعض روحیں مرگھٹ یا قبر پر رہتی ہیں،بعض چاہ برہوت میں ،بعض زمین کے نچلے طبقوں میں ،بعض اس سے بھی نیچے سجین میں ،مگر وہ کہیں بھی ہوں اپنے مرگھٹ یا قبر پر گزرنے والوں کو دیکھتے ،پہچانتے اور انکی بات سنتے ہیں ،انہیں کہیں جانے آنے کا اختیار نہیں ہوتا بلکہ یہ قید رہتی ہیں، یہ خیال کہ روح مرنے کے بعد کسی اور بدن میں چلی جاتی ہے ،اسکا ماننا کفر ہے ۔

جواب دیجئے

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.