لاکھوں سلام

مصطفی جانِ رحمت پہ لاکھوں سلام

شمع بزمِ ہدایت پہ لاکھوں سلام

شہرِ یارِ اِرم تاجدارِ حرم

نَوبہارِ شفاعت پہ لاکھوں سلام

شبِ اسریٰ کے دولہا پہ دائم درود

نوشۂ بزمِ جنّت پہ لاکھوں سلام

ہم غریبوں کے آقا پہ بے حد درود

ہم فقیروں کی ثَروَت پہ لاکھوں سلام

نیچی نظروں کی شرم و حیا پر درود

اونچی بینی کی رفعت پہ لاکھوں سلام

پتلی پتلی گلِ قُدس کی پتلیاں

اُن لبوں کی نزاکت پہ لاکھوں سلام

جس سے تاریک دل جگمگانے لگے

اُس چمک والی رنگت پہ لاکھوں سلام

جس سہانی گھڑی چمکا طیبہ کا چاند

اُس دل افروز ساعت پہ لاکھوں سلام

کاش محشر میں جب ان کی آمد ہو اور

بھیجیں سب ُانکی شوکت پہ لاکھوں سلام

مجھ سے خدمت کے قدسی کہیں ہاں رضا

مصطفی جانِ رحمت پہ لاکھوں سلام