وزیرِ اعظم نے ترجمانی کا حق ادا کردیا

مفتی اعظم پاکستان مفتی منیب الرحمٰن

وزیرِ اعظم جنابِ عمران خان نے اہلِ کشمیر سے وعدہ کیا تھا :’’میں اقوامِ متحدہ کی جنرل اسمبلی میں آپ کی ترجمانی کروں گا‘‘، اس میں کوئی شک نہیں کہ انہوں نے بے حس اور انسانی حرمت کے جذبات سے عاری حاضرین کے سامنے ترجمانی کا حق ادا کردیا، نیز اسلاموفوبیا پر مدلّل گفتگو کی ،ماحولیات کی بربادی کی طرف متوجہ کیا اور عالمی طاقتوں کو بتایا کہ پسماندہ اور ترقی پذیر ممالک میں کرپشن کے اصل سرپرست اور پشتیبان وہ ہیں اور لوٹی ہوئی دولت کے لیے آف شور کمپنیز کی صورت میں کمین گاہیں انہوں نے بنا رکھی ہیں ۔ شاید جنرل اسمبلی میں کسی اسلامی اور پاکستانی حمیت کے حامل وزیر اعظم کا پہلا جاندار اور تاریخی خطاب تھا۔انہوں نے مفصّل ،مدلّل اور پراعتماد انداز میں گفتگو کی ،اُن کی گفتگو میں مرعوبیت اور دفاعی انداز نام کو نہ تھا،بلکہ فرنٹ فُٹ پر آکر انہوں نے انسانیت کے خفتہ ضمیر کو للکارا ،وہ عالمِ اسلام کے ترجمان اور ناموسِ رسالت ﷺکے پاسبان نظر آرہے تھے ،مسلم حکمرانوں کی بے حسی اور مرعوبیت کی طرف بھی انہوں نے متوجہ کیا، اسلاموفوبیاپر جارحانہ گفتگو کی ،وقت کا تقاضا یہی تھا، ہم ان کوپوری پاکستانی قوم کی طرف سے باحمیت ترجمانی پر دلی مبارک باد پیش کرتے ہیں۔ (۲۸ستمبر۲۰۱۹)ء