نعت پاک

نتیجۂ فکر : حضرت مولانافروغ احمد اعظمی ( پرنسپل دارالعلوم علیمیہ جمداشاہی )

آپ نے اب تک نہ کوئی بات ٹالی یا رسول

آپ سے میں آپ ہی کا ہوںسوالی یا رسول

دو جہاںکی میں نے پھر ہر چیز پالی یا رسول

میں نے پالی آپ کی گر ذات عالی یا رسول

ایک میری ہی زباں پر یا رسول اللہ نہیں

پڑھ رہی ہے ہر شجر کی ڈالی ڈالی یا رسول

کس مپرسی کا اگر شکوہ کر وں تو ہے غلط

آپ ہیں جب میرے حامی اور والی یا رسول

طلعت زیبا سے چمکائیں میرا تاریک دل

تاکہ میں دیکھا کروںصورت جمالی یا رسول

میرے آنسو کہہ رہے ہیں آج دل کی ساری بات

سامنے ہے آپ کے روضے کی جالی یا رسول

تشنہ لب کو ڈھونڈتا ہے آپ کا بحر سخا

میں لب دریا کھڑا ہوں لے کے پیالی یا رسول

طعنہ دیں گے ہند والے نقص الفت کا بہت

میںاگرجائوں یہاں سے ہاتھ خالی یارسول

کیوں فرشتے مجھ کو پیشی کے لئے لے جائیں گے

حشر میں مل جائے گر دامان عالی یارسول

قبلۂ اہل حرم جس وقت سے یورپ ہوا

روح ایماں ہے نہ ہے جذبِ بلالی یا رسول

جب ہوئی فرقت میں جنت کی کیاری بے قرار

اپنے پہلو میں جگہ تم نے نکالی یا رسول

ہند بھیجیں گر تو پھر میری لحد کے واسطے

اپنے قدموں میں جگہ رکھیں گے خالی یا رسول

نعت کہہ لی اور سنا لی آپ نے در پر فروغ ؔ

اب کہیں چادر اوڑھاویں کالی کالی یا رسول