مولانا فضل الرحمان تیرا شکریہ

پچھلے کچھ دنوں سے مولانا فضل الرحمن کے لئے دعا نکلتی ہے,

یہ مت سمجھئیے! حکومت کے خلاف دھرنے کی وجہ سے دعا نکلتی ہے…. نہیں نہیں

یہ دھرنا مجھے ہرگز پسند نہیں، یہ بے وقت کی راگنی ہے ہے اور میڈیا اس کو مسلح فورسز کی اسلام آباد کی طرف چڑھائی ثابت کرنا چاہتا ہے…

اور پھر مذہبی طبقے کو انتہا پسند ثابت کرنے کی کوشش کی جارہی ہے……..

مگر یہ یاد رہے دھرنا تو مجھے “تحریک انصاف” کا بھی ہرگز پسند نہیں تھا کیونکہ اس میں بھی ہماری بچیوں کو ہی نچایا جارہا تھا…

ناچنے کی بری عادت کا ایک نتیجہ “حریم شاہ” کی پہنچ اور سینکڑوں ٹک ٹاک گرلز ہیں……

____________________

لیکن میری دعا کا سبب بھی مولانا فضل الرحمن کا دھرنا ہے…..

اس لیے کہ ایک صدی سے جو مسلمانوں میں اختلاف پیدا ہوا تھا….

اس زیبرا والے جھنڈے تلے اس امت کا ایک مرکزی اختلاف ختم کر دیا “جانے یا انجانے میں” …..

یہ بھی سنا ہے کہ مولانا کی جماعت میں ہزاروں علماء ہیں اگر یہ سچ ہے تو پھر انہوں نے بھی اتفاق کیا ہوگا تو ہی ساتھ چل رہے ہیں ….

_______دو تین بنیادی اختلافات تھے_______

قبروں پر جانا بدعت ہے

جھنڈے اٹھانا بدعت اور فضول خرچی ہے

اور رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کی عظمت و شان کے اظہار کے لیے جلوس یا مارچ کس صحابی نے یا تابعی نے کیا لہذا یہ بھی بدعت ہے….

مولانا اور ان ہزاروں علماء نے آزادی مارچ، یا جلوس، یا دھرنے پہ جا کے، جھنڈے اٹھا کے، مکانوں اور گاڑیوں پر لگا کے، کنٹینر سجا کے، کروڑوں روپیہ لگا کے، بیس لاکھ لوگوں کی شمولیت کے دعوے کے ساتھ جلوس نکال کر ہماری ساری مشکلیں حل کر دیں………

مزارات اولیاء پر حاضری دے کر امت سے ایک بڑا فتنہ ختم کردیا …………. شکریہ مولانا

ایک سعودی مفتی کا فتوی پڑھ رہا تھا

کسی شخص نے سوال کیا کہ مفتی صاحب آپ میلاد النبی صلی اللہ علیہ وسلم کی مخالفت کرتے ہیں لیکن ہفتہ صفائی کا اہتمام تو پوری توجہ سے بینرز کے ساتھ، جھنڈے، اشتہارات اور سائن بورڈ پر لاکھوں روپیہ خرچ کر رہے ہیں اور ہزاروں کی تعداد میں روڈوں پر گروپوں کی صورت میں نکل کر وہی عمل کر رہے ہیں جو میلاد النبی صلی اللہ علیہ وسلم کے جلوس میں کیا جاتا ہے……

تو مفتی صاحب کا جواب سنیئے اور فیصلہ کیجیے.

____ مفتی صاحب کا جواب ____

بھائی یہ صفائی کی آگاہی مہم ہے لوگوں کو صفائی کی طرف توجہ دلانے کے لیے ھے، تاکہ لوگوں میں شعور آ جائے اسی لیے یہ سارا اہتمام کیا جا رہا ہے………

مفتی صاحب کے اس جواب پر بندہ ناچیز محمدیعقوب یہ عرض کرنا چاہتا ہے….

اگر بینر لگانے سے، جھنڈے اٹھانے سے، اشتہاری مہم چلانے سے، صفائی کا شعور آ سکتا ہے….

جب کوئی عشق مصطفی صلی اللہ علیہ وسلم کے لئے جھنڈا اٹھائے گا، اشتہاری مہم چلائے گا، رسول اللہ کے حسن و جمال کے تذکرے کرے گا، آپ کے اخلاق و کردار کو بیان کرے گا….

تو اس سے بھی نئی نسل میں رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم سلم کی محبت کا شعور، اسلام کی پہچان، اسلام میں مسلمان کا کردار، لوگوں کے ذہنوں میں بیٹھے گا اور شعور آئے گا…..

آخر میں اس جملے ہر بات کو ختم کرنا چاہتا ہوں کہ ہمیشہ بڑے بڑے علماء کو دیکھیے کہ انکے اندر اتنی دوری نہیں جتنی نیچے والے طبقے نے اپنے اندر پیدا کر رکھی ہے…….

اس انداز کو بدلیں کہ

میری بات “اوئے ہوئے”

تیری بات “ہائے ہائے”

تحریر :- محمد یعقوب نقشبندی اٹلی