حدیث نمبر :665

روایت ہے حضرت کعب ابن مالک سے فرماتے ہیں کہ حضورنبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم جب بھی سفرسے واپس ہوتے تو دن میں چاشت کے وقت ہی تشریف لاتے پھرجب آتے تو مسجد سے ابتدا کرتے وہاں دو رکعتیں پڑھتے پھروہاں ہی کچھ دیر بیٹھتے ۱؎(مسلم،بخاری)

شرح

۱؎ اس حدیث سے تین مسئلے معلوم ہوئے:ایک یہ کہ سفرسے گھرکوواپس دن میں آنا چاہیئے مگر یہ اس زمانے کے لیےتھا جب کہ مسافر اپنی آمدکی اطلاع پہلے سے نہیں دے سکتا تھا۔اب چونکہ تار و خط کے ذریعے اطلاع پہلے دی جاسکتی ہے اس لئےرات میں آنے میں کوئی حرج نہیں،گھر والے اس کے منتظر اوراس کے لئےتیار رہیں گے۔دوسرے یہ کہ گھرپہنچ کر پہلے مسجد میں آئے اور وہاں نفل قدوم پڑھے اگر وقت کراہت نہ ہو،ورنہ وہاں صرف کچھ بیٹھ لے۔تیسرے یہ کہ گھر میں آنے سے پہلے مسجد میں کچھ بیٹھے اورلوگوں سے وہاں ہی ملاقات کرلے۔