یہ خطبہ امام احمد رضا محدث بریلوی قدس سرہ العزیز کا تحریر کردہ ہے ، جس میں تقریباً اسی مصطلحات حدیث کو بطور براعۃ استہلال نہایت فصاحت و بلاغت کے ساتھ ذکر فر مایا ہے ۔ جو آپ کی ذہانت و فطانت اور جودت طبع پر دال ہے۔ مصطلحات مشمولہ مندرجہ ذیل ہیں:۔

٭حدیث ٭ خبر ٭ تقریر ٭ مسموع٭ سند ٭اسناد ٭طریق ٭متواتر٭مشہور ٭مستفیض ٭ عزیز ٭غریب٭ فرد ٭ احد ٭ مقبول ٭مردود٭صحیح ٭متصل ٭موصول ٭وصل٭ متصل الاسانید ٭معلل ٭علت ٭شاذ٭ شذوذ ٭ ضبط ٭ حسن ٭ ضعیف٭ اعتضاد ٭ محفوظ ٭منکر ٭متابع٭ شاہد ٭ معتبر ٭مرسل ٭ معضل٭ منقطع ٭مدلس ٭موضوع ٭ متروک٭ معلول ٭مدرج ٭ مضطرب ٭ مزید فی متصل الاسانید٭ اختلاط ٭ وہم ٭ مرفوع ٭ موقوف٭ مقطوع ٭منتہی ٭عوالی ٭ نوازل٭ علیۃ ٭ علو ٭ رجال ٭ مسلسل با لاولیت ٭رواۃ ٭دعاۃ ٭صحب ٭ روی٭ یروی ٭ اجازۃ ٭مناولۃ ٭وجادۃ٭ مجاز ٭صالح ٭جید ٭حافظ٭حاکم ٭حجت ٭جامع ٭ جوامع٭سنن ٭مسند ٭معجم ٭مستخرج٭ مستدرک ٭ صحاح ٭ مخرج ان سب کی تفصیل مقدمہ میں ملاحظہ فرمائیں۔

بسم اللہ الرحمن الرحیم

الحمد للہ المسلسل احسانہ ، المتصل انعامہ، غیر منقطع ولا مقطوع فضلہ واکرامہ، ذکرہ سند من لا سند لہ ، واسمہ احد من لا احد لہ۔فافضل الصلوات العوالی النزول ، واکمل السلام المتواتر الموصول، علی اجل مرسل ، کشاف کل معضل، العزیز الاعزالمعز الحبیب، الفردفی وصل کل غریب، فضلہ الحسن مشہور مستفیض ، وبا لا ستناد الیہ یعود صحیحاً کل مریض ، قدجاء جودہ المزید ، فی متصل الاسانید، ، بل کل فضل الیہ مسند، عنہ یروی والیہ یرد، فسموط فضائلہ العلیہ ، مسلسلات با لاولیۃ، وکل درجید من بحرہ مستخرج، وکل مدر جودفی سائلیہ مدرج، فہو المخرج من کل حرج، وہو الجامع، ولہ الجوامع، علمہ مرفوع، وحدیثہ مسموع، و متابعۃ مشفوع، والاصر عنہ موضوع، وغیرہ من الشفاعۃ قبلہ ممنوع، فالیہ الاسناد فی محشرالصفوف، وامر الموقف علی رایہ موقوف، حوضہ المورود، لکل وارد مسعود ، فیافوز من ہو منہ منہل، ومعلول فیہ کل علۃ من معلل، تزول حزبہ المعتبر، والشذوذ منہ منکر ،وطریق الشاذ الی شواظ سقر،حافظ الامۃ من الامور الدلہمۃ الذاب عناکل تلبیس و تدلیس ، والجابر لقلب بائس مضطرب من عذاب بئیس ، الحاکم الحجۃ الشاہد البشیر ، معجم فی مدحہ کل بیان و تقریر، علوہ لا یدرک ، وما علیہ مستدرک ، مقبولہ یقبل ، ومتروکہ یترک ، تعدد طرق الضعیف الیہ ،فمن سننہ الصحاح التعطف علیہ ، فیجبر باعتضادہ قلبہ الجریح ، ویر تقی من ضعفہ الی درجۃ الصحیح، مداراسانید الجود والاکرام ، منتھی سلاسل الانبیاء الکرام ، صلی اللہ تعالی علیہ وعلیہم وسلم، ملأ اٰفاق السماء و اطراف العالم ،و علی الہ وصحبہ وکل صالح من رجلہ وحزبہ ، رواۃ علمہ ودعاۃ شرعۃ ووعاۃ ادبہ ، و علی کل من لہ وجادۃ ومنا ولۃ ، من افضالہ الواصلۃ الدارۃ المتوا صلۃ ، بحسن ضبط محفوظ النظام، من دون وہم ولا ایہام، ولااختلاط با لا عداء اللیام ، ماروی خبر و ہوی اجازۃ ، و غلب حقیقۃ الکلام مجازۃ۔ آمین۔ اما بعد۔