ثواب ہی ثواب

حضرت انس بن مالک رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللہ ﷺ نے ارشاد فرمایا : اے عثمان بن مظعون ! جس نے صبح کی نماز جماعت کے ساتھ ادا کی تو اس کے لئے یہ نماز قبول حج اور قبول عمرہ کے برابر ہو جاتی ہے ۔ اے عثمان ! جس نے ظہر کی نماز ادا کی اس کو پچیس نمازوں کا ثواب ہے ۔ اور اس کے ستر درجے جنت میں بلند ہوں گے ۔ اے عثمان ! جس نے عصر کی نماز با جماعت ادا کی پھر غروب آفتاب تک ذکر الٰہی میں مشغول رہا تو گویا کہ اس نے اولاد اسمٰعیل میں سے بارہ ہزار غلام آزاد کیا ۔ اور جس نے مغرب کی نماز باجماعت ادا کی اس کیلئے پچیس نمازوں کا ثواب ہے ۔ اور اسی کے ساتھ جنت ِعدن میں اس کے ستر درجے بلند ہوں گے ۔ اے عثمان ! جس نے عشاء کی نماز با جماعت ادا کی گو یا اس نے شب قدر میں عبادت کی ۔

میرے پیارے آقا ﷺ کے پیارے دیوانو! تاجدار کائنات ﷺ نے مذکورہ حدیث شریف میں پنجوقتہ نمازِ باجماعت کا ثواب بیان فرمادیا۔ اب جس کسی کونمازِ باجماعت کے فیضان سے مالا مال ہونا ہو نیز مذکورہ انعامات کو پانا ہو تو وہ نماز با جماعت کا اہتمام کرے۔ تھوڑی سی چستی اور قربانی سے اگر اتنا ثواب ملتا ہے تو ایک مسلمان کو ضرور قربانی دینی چاہئیے۔ اللہ ہم سب کو اپنے پیارے محبوب ﷺ کے صدقہ و طفیل نماز با جماعت کا اہتمام کرنے کی توفیق عطا فرمائے ۔آمین بجاہ النبی الکریم علیہ افضل الصلوٰۃ والتسلیم۔