(۴) دل کا حال خدا جانتا ہے

۴۔ عن أسامۃ بن زید رضی اللہ تعالیٰ عنہما قال : بعثنا رسول اللہ صلی اللہ تعالیٰ علیہ وسلم فی سریۃ فصبحنا الحرقات من جھینۃ فأدرکت رجلا فقال لا إلہ إلا اللہ فطعنتہ فوقع فی نفسی من ذلک فذکرتہ للنبی صلی اللہ تعالیٰ علیہ وسلم فقال رسول اللہ صلی اللہ تعالیٰ علیہ وسلم : أ قَالَ لاَ إلٰہَ إلاّ اللہُ وقتلتہ قال : قلت یا رسول اللہ ! إنما قالہا خوفا من السلاح قال : أ فَلاَ شَقَقْتَ عَنْ قَلْبِہٖ حَتٰی تَعلمَ أقالَہا أم لا، فمازال یکررہا علی حتی تمنیت أنی أسلمت یومئذ

حضرت اسامہ بن زید رضی اللہ تعالیٰ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ تعالیٰ علیہ وسلم نے ہمکو ایک سریہ میں روانہ فرمایا۔ ہمارا قبیلۂ جہینہ کی ایک شاخ حرقات سے مقابلہ ہوا، میں نے ایک شخص پر حملہ کیا اس نے بیساختہ کلمئہ طیبہ لا الہ الا اللہ پڑھا لیکن میں نے اسے نیزہ مار کر ہلاک کردیا ۔ پھر میرے دل میں یہ بات کھٹکی تو میں نے حضور نبی کریم صلی اللہ تعالیٰ علیہ وسلم سے اس کا تذکر ہ کیا۔ حضور صلی اللہ تعالیٰ علیہ وسلم نے ارشاد فرمایا : کیا اس نے لا الہ الا اللہ پڑھا تھا اور تم نے اس کو قتل کردیا؟ میں نے عرض کیا ۔ یا رسول اللہ ! اس نے ہتھیار کے خوف سے پڑھا ۔ حضور نے فرمایا تو تم نے اس کا دل چیر کر کیوں نہیں دیکھ لیا ؟ کہ تم جان لیتے کہ صدق دل سے پڑھا یا یونہی محض خوف سے ۔ حضور یہ ہی جملہ بار بار فرماتے رہے یہاں تک کہ اس تشدید ی حکم سے متأثر ہو کر میںتمنا کرنے لگا کہ کاش میں آج ہی مسلمان ہوا ہوتا ۔ فتاوی رضویہ ۸/۳۲۳

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

۴۔ الصحیح لمسلم ، کتاب الایمان ۶۷ باب تحریم قتل الکافر بعد قولہ لا الہ الا اللہ

السنن لابی داؤد کتاب الجہاد ، ۱/۳۵۵

السنن لابن ماجہ ، کتاب الفتن ، ۲/۲۹۰

المسند لاحمد بن حنبل ، ۴/۴۳۹ ، ۵/۲۰۷