جو کہے سن کے مدعا مطلب

شہنشاہ سخن ستاذ زمن علامہ حسن رضا بریلوی

❤️

جو کہے سن کے مدعا مطلب

      میرے مطلب سے اُس کو کیا مطلب

❤️

مل گیا دل نکل گیا مطلب

     آپ کو اب کسی سے کیا مطلب

❤️

جو نہ نکلے کبھی نہ پورا ہو

     وہ مرا مدعا مرا مطلب

❤️

حُسن کا رُعب ضبط کی گرمی

     دل میں گُھٹ گُھٹ کے رہ گیا مطلب

❤️

نہ سہی عشق دُکھ سہی ناصح

     تجھ کو کیا کام تجھ کو کیا مطلب

❤️

مژدہ اے دل کہ نیم جاں ہوں میں

     اب تو پورا ہوا ترا مطلب

❤️

اپنے مطلب کے آشنا ہو تم

     سچ ہے تم کو کسی سے کیا مطلب

❤️

آتشِ شوق اور بھڑکا دی

     منہ چھپانے کا کھل گیا مطلب

❤️

کچھ ہے مطلب تو دل سے مطلب ہے

     مطلب دل سے ان کو کیا مطلب

❤️

اُن کی باتیں ہیں کتنی پہلو دار

     سب سمجھ لیں جدا جدا مطلب

❤️

جب مری آرزو سے کام نہیں

    پھر مرے دل سے تم کو کیا مطلب

❤️

حال کہنے سے مجھ کو یوں روکا

    میں تمہارا سمجھ لیا مطلب

❤️

خط میں لکھوں جو حال فرقت کا

    تو عبارت سے ہو جدا مطلب

❤️

نیل ہو گا عدو کے بوسوں کا

   منہ چھپانے سے اور کیا مطلب

❤️

اُس کو گھر سے نکال کر خوش ہو

     کیا حسنؔ تھا رقیب کا مطلب

❤️