🕋 اب نہیں تو کب ؟

🍁ان دنوں ایک وائرس کے آگے دنیا بھر کی بے بسی اور لاچارگی ثابت ہو چکی ہے ۔

لیکن اے میرے مسلمان بھائی بندو ! تم ہرگز لاچار نہیں ہو

سنو سنو تمہارا رب کیا کہہ رہا ہے ۔

🌹 أَمَّن يُجِيبُ الْمُضْطَرَّ إِذَا دَعَاهُ وَيَكْشِفُ السُّوءَ وَيَجْعَلُكُمْ خُلَفَاءَ الْأَرْضِ ۗ أَإِلَٰهٌ مَّعَ اللَّهِ ۚ قَلِيلًا مَّا تَذَكَّرُونَ

( سورة النمل 62 )

🔊 تو اور کون ہے جو مجبور کی سنتا ہے جب وہ اس سے دعاء کرے اور برائی کو دور کر دیتا ہے ۔ اور تمہیں زمین پر خلافت دے دیتا ہے ۔ کیا اس کے ساتھ کوئی اور معبود بھی ہے ۔ تم بہت کم نصیحت حاصل کرتے ہو ؟

🌱ذرا آیت پر غور تو کرو ۔

کیا تیور ہیں ۔ فرمایا صرف اور صرف میں ہوں اور کوئی ہے ہی نہیں جو

  • مجبور کی سنے

  • اس سے تکلیف دور کرے

  • زمین پر زندہ رہنے دے

    اور یہ انسانی رویہ بھی بتا دیا کہ بہت کم ایسا ہے کہ تم نصیحت پکڑو ۔

اور رب کا یہ اعلان بھی پڑھ لیں ۔

🌹 (بَلْ إِيَّاهُ تَدْعُونَ فَيَكْشِفُ مَا تَدْعُونَ إِلَيْهِ إِنْ شَآءَ)

( سورة الأنعام/41)

🥀بلکہ صرف اسی سے ہی تم دعا کرتے ہو تو اگر وہ چاہے تو تم سے دور کردیتا ہے وہ عذاب جس کے دور کیئے جانے کی تم نے اس سے دعا کی ہوتی ہے ۔

🔊 اس آیت سے تین باتیں صاف پتا چل رہی ہیں ۔

(1) کفار و مشرکین بھی نزول عذاب کے وقت جب کوئی چارا نہ رہے تو صرف اللہ ہی کو پکارتے ہیں ۔

(2) اگر اللہ کی مشیت ہو تو ان کی دعائیں قبول فرما کر ان سے وہ عذاب دور کر دیتا ہے ۔

(3) دعاء کا قبول کرنا اس عز و جل کی مشیت پر موقوف ہے ۔

🏵قربان جائیں اس کریم رب کے کرم و احسان کے کہ بحالت اضطرار کافر بھی اس سے دعا کرے تو وہ بمطابق مشیت اس کی دعاء کو قبول فرما کر اس عذاب کو دور کر دیتا ہے

تو اے کلمہ گو محمدی اگر تو بے چارگی کو یقینی بناتے ہوئے اسے بوقت عذاب پکارے گا تو کیا وہ تیری نہیں سنے گا ؟

💚 اے اہل پاکستان

اب بھی تم اس رب العالمین کی طرف رجوع نہیں کرو گے تو کیا سب کچھ ختم ہونے پر کرو گے ؟

تدابیر ساری کرو ، احتیاطیں ساری کرو لیکن

🌻 رب کو تو نہ بھولو ۔ اس کو تو ناراض نہ کرو۔

🌻۔ اس کو راضی کرو وہ راضی ہو گا تو یہ تدابیر اور حفظان صحت کے اصول کارگر وگرنہ سب الٹا پڑے گا ۔

💥 تمہاری باقیات بھی نوحے پڑھیں گی

الٹی ہو گئیں سب تدبیریں کچھ نہ دوا نے کام کیا ۔

🌷سنو ! تمہارا نبی بھی دعاء کو

” سلاح المؤمن ” بتا رہا ہے ۔ تمہارا ہتھیار دواء نہیں بلکہ دعاء ہے اور ہائے ہائے تمہیں اسی سے دغا ہے ۔۔

حالانکہ تمہارے نبی اس کے کارگر ہتھیار ہونے کی بات بڑے پختہ انداز میں کر رہے ہیں ۔

فرما گئے ہیں

🌴 : ( لا تعجزوا في الدعاء، فإنه لن يهلك مع الدعاء أحد )

📙 ابن حبان اور حاکم

⚘حضرت انس رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ اللہ کے رسول صلی اللہ علیہ وآلہ وبارک وسلم نے فرمایا

کہ دعا مانگنے میں کمزوری مت دکھاؤ کیونکہ دعا کرتے ہوئے کوئی بھی شخص ہلاک نہیں ہوگا ۔

🌴: ( لا يرد القضاء إلا الدعاء ..)

📙 الترمذي

⚘حضرت سلمان فارسی رضی اللہ تعالی عنہ سے روایت ہے کہ

اللہ کے رسول صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا اللہ کی تقدیر کو صرف اور صرف دعا ہی روک سکتی ہے ۔

🌲اور روکتی بھی کس انداز سے ہے ۔ ملاحظہ فرمائیں

🌴( لا يغني حذر من قدر، و الدعاء ينفع مما نزل و مما لم ينزل، و إن البلاء لينزل فيتلقاه الدعاء فيعتلجان).

📙 حاکم

⚘سیدہ عائشہ صدیقہ رضی اللہ تعالی عنہا روایت کرتی ہیں

کوئی بھی احتیاط تقدیر کے آگے کچھ فائدہ نہیں دے سکتی اور دعا فائدہ دیتی ہے جو بَلا نازل ہوچکی اس میں بھی اور جو ابھی نازل نہیں ہوئی اس میں بھی

بَلا اور مصیبت اترتی ہیں تو مانگی گئی دعا آگے سے اس کو پکڑ لیتی ہے تو وہ باہم گتھم گتھا ہو جاتی ہیں ۔

🌲اور اللہ کا فضل و کرم بھی دعاء کا ساتھ دیتا ہے

🌴: (لا ينفع الحذر من القدر، ولكن الله يمحو بالدعاء ما يشاء من القدر)

📙 حاکم

⚘حضرت سیدنا عبداللہ بن عباس رضی اللہ عنہما سے روایت ہے کہ

احتیاط تقدیر کے آگے کوئی نفع نہیں دیتی لیکن دعاء کی وجہ سے اللہ تبارک وتعالی جو چاہتا ہے تقدیر میں سے مٹا دیتا ہے ۔

🤲🏾 فقیر کی سابق تحریروں میں دعائیں موجود ہیں ۔

اللہ تبارک و تعالی ان سب کو فقیر خالد محمود، اس کے اہل و عیال، اعزہ و اقارب و احباب اور جمیع امت مسلمہ کے حق میں قبول فرما لے ۔ اور اس سے یہی یقین ہے ۔