أَعـوذُ بِاللهِ مِنَ الشَّيْـطانِ الرَّجيـم

بِسْمِ اللّٰهِ الرَّحْمٰنِ الرَّحِيْمِ

رَضُوۡا بِاَنۡ يَّكُوۡنُوۡا مَعَ الۡخَوَالِفِ وَطُبِعَ عَلٰى قُلُوۡبِهِمۡ فَهُمۡ لَا يَفۡقَهُوۡنَ‏ ۞

ترجمہ:

انہوں نے یہ پسند کیا کہ وہ پیچھے رہ جانے والی عورتوں کے ساتھ ہوجائیں اور ان کے دلوں پر مہر لگا دی گئی ہے سو وہ نہیں سمجھتے

تفسیر:

اللہ تعالیٰ کا ارشاد ہے : انہوں نے یہ پسند کیا کہ وہ پیچھے رہ جانے والی عورتوں کے ساتھ ہوجائیں اور ان کے دلوں پر مہر لگا دی گئی ہے سو وہ نہیں سمجھتے (التوبہ : ٨٧)

ان کے دلوں پر مہر لگانے کا معنی یہ ہے کہ ان کا دل کفر کی طرف رغبت کرتے کرتے اس حد تک پہنچ گیا ہے کہ اس کے بعد ایمان لانے کا امکان باقی نہیں رہا یا انہوں نے اللہ تعالیٰ اور اس کے رسول (صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم) کی ایسی سخت نافرمانی اور گستاخی کی ہے کہ سزا کے طور پر اللہ تعالیٰ نے ان کے دلوں پر مہر لگا دی۔ اب وہ ایمان لانا بھی چاہیں تو ایمان نہیں لاسکتے۔

تبیان القرآن – سورۃ نمبر 9 التوبة آیت نمبر 87