(۱۲) غیب پر ایمان قوی ہے

۴۶ ۔ عن عبد الرحمن بن یزید رضی اللہ تعالیٰ عنہ قال : ذَکَرُوْا عِنْدَ عَبْدِ اللّٰہِ أصْحَابَ مُحَمَّدٍ صَلَّی اللّٰہُ تَعَالیٰ عَلَیْہِ وَسَلَّمَ وَ اِیْمَانَہُمْ قَالَ:فِقَالَ عَبْدُ اللّٰہِ:إنَّ أمْرَ مُحَمَّدٍ کَانَ بَیِّناً لِّمَن رَّاہُ وَ الَّذِیْ لاَ إلٰہَ غَیْرُہٗ مَا آمَنَ مُؤمِنٌ أفْضَلَ مِنْ إیْمَانٍ بِغَیْبٍ ثُمَّ قَرَأ ’’ ا لٓمٓ ۰ ذٰلِکَ الْکِتَابُ لَا رَیَْبَ فِیْہِ ‘‘ إلیٰ قَوْلِہٖ تَعَالیٰ یُؤمِنُوْنَ بِالْغَیْبِ۔

حضرت عبد الرحمن بن یزید رضی اللہ تعالیٰ عنہ سے روایت ہے کہ لوگوں نے حضرت عبداللہ بن مسعود رضی اللہ تعالیٰ عنہ کے سامنے صحابہ کرام رضوان اللہ تعالیٰ علیہم اجمعین اور انکے ایمان کا تذکرہ ہوا تو حضرت عبد اللہ بن مسعود رضی اللہ تعالیٰ عنہ نے ارشاد فرمایا :بیشک حضور سید عالم صلی اللہ تعالیٰ علیہ وسلم کی ذات اقدس اور انکا لایا ہوا دین ان لوگوں کیلئے بالکل واضح تھا جنہوں نے حضور کو دیکھا ۔قسم اس ذات کی جس کے سوا کوئی معبود نہیں سب سے افضل و اقوی ایمان بالغیب ہے ۔ پھر آپ نے یہ آیات کریمہ تلاوت کیں ۔ الٓمٓ ۰ذلک الکتاب لا ریب فیہ إلی قولہ تعالیٰ یؤمنون بالغیب۔ مالی الجیب ص ۶۴

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

۴۵ التفسیر للقرطبی، ۵/ ۳۹۵ ٭ المؤطا لمالک، ۲۴۱

تاریخ اصفہان لابی نعیم ۲/۲۲۶ ٭ التفسیر لابن کثیر ، ۲/۲۶۸

الجامع الصغیر للسیوطی، ۲/۳۹۶ ٭ المسند للحمیدی ، ۱۱۱۳

۴۶۔ المستدرک للحاکم ، تفسیر ، ۲/۲۸۶ ٭