مرزا علی انجینئر کے شہرہ آفاق جھوٹ(9)

مرزا جہلمی کی قادیانیت نوازیاں

مرزا جہلمی اولیاءاللہ، محدثین و مفسرین کیلئے تو نہایت غلیظ و بازاری زبان استعمال کرتا ہے لیکن جوں ہی غامدیت، قادیانیت جیسے فسادیوں کی بات آتی ھے تو اسی مرزے کی بازاری زبان شیریں زبان میں تبدیل ہوجاتی ہے۔

مرزا جہلمی جوکہ کافی صفات میں مرزا قادیانی کا ہم پلہ ہے اپنے ایک بیان میں عقیدہ ختم نبوت کے بارے کہتا ہے کہ تحفظ عقیدہ ختم نبوت بڑا نفع مند کاروبار ھے اگر یہ کام کیا جائے تو بیرون ملک سے بہت زیادہ پیسہ ملتا ھے۔

مرزا جہلمی آخر اس بیان سے ثابت کیا کرنا چاہتا ھے؟

کہ رد قادیانیت پر کام اسلام کی مرضی نہیں بلکہ کافروں کی مرضی ھے؟

اب اسکے چیلے یہ کہیں گے کہ فلاں صاحب نے ایسا کہا ۔۔۔

چلیں بالفرض محال اگر تسلیم کرلیا جائے کہ کسی کے کہنے پر ایسا بیان دیا تو کیا مرزا جہلمی کیا فینڈر پیتا ھے کہ آنکھیں بند کرکے اسکو تسلیم کرلیا۔

اسی مرزا جہلمی کو 1400 سال قبل کی وہ باتیں تو پتا چل جاتی ہیں جوکہ بڑے بڑے محدثین کو بھی معلوم نا ہوئی لیکن فی زمانہ کی باتوں سے نا آشنا۔

گل وچ ہور اے

مرزا جہلمی اس صدی کا کذاب اعظم ہے کیونکہ حدیث مبارکہ ہے کہ کسی کے جھوٹا ہونے کیلئے اتنا ہی کافی ھے کہ وہ سنی سنائی بات کو آگے بیان کردے۔

اب اسکے فالورز فوراً یہ کہیں گے کہ اس نے اپنے بیان سے رجوع کرلیا ۔۔۔۔۔

تو انکی بارگاہ میں عرض یہ ھے کہ اتنی بڑی کھچ سے رجوع نہیں بلکہ توبہ کی جاتی ھے۔

اور وہ رجوع بھی جوکہ اس گناہ کا کفارہ نہیں لوگوں کے کہنے پر کیا ۔

اس کے اس بیان سے آپ اندازہ لگاسکتے ہیں کہ یہ کتنی غلیظ اور پسماندہ سوچ کا مالک ھے۔

احمد رضا رضوی

MirzaisMirzai