۵۲۔ عن المقداد بن معدی کرب الکندی رضی اللہ تعالیٰ عنہ قال: قال رسول اللہ صلی اللہ تعالیٰ علیہ وسلم : ألَااِنِّی اُوْ تِیْتُ الْکِتَابَ وَ مِثْلَہٗ مَعْہٗ ۔ألَا یُوْشَکُ رَجُلٌ یَنْثَنِی شَبْعَاناً عَلیٰ اَرِیْکَتِہٖ یَقُوْلُ: عَلَیْکُمْ بِالْقُرْآنِ فَمَا وَجَدْتُمْ فِیْہِ مِنْ حَلَالٍ فَأحَلُّوْہُ وَ مَا وَجَدْتُمْ فِیْہِ مِنْ حَرَامٍ فَحَرِّمُوْہٗ ، اَلاَ لَا یَحِلُّ لَکُمْ لَحْمُ الْحِمَارِ الْأ ہْلِی وَ لاَ کُلُّ ذِیْ نَابٍ مِنْ السِّبَاعِ ، اَلاَ وَ لَا لُقْطَۃٌ مِنْ مَالِ مُعَاہدٍ اِلّا أنْ یَّسْتَغْنِیَ عَنْہَا صَاحِبُہَا، وَمَنْ نَزَلَ بِقَوْمٍ فَعَلَیْہِمْ أنْ یَقِرُّوْہُمْ، فَاِنْ لَمْ یَقُرُّوُہُمْ فَلَہُمْ أنْ یُعَقِّبُوْہُمْ وَ زَادَ بَعَضٌ۔ وَ اِنَّ مَا حَرَّمَ رَسُوْلُ اللّٰہُ کَمَا حَرَّمَ اللّٰہُ ۔ٍ فتاوی رضویہ ۹/۱۱۹

حضرت مقداد بن معدی کرب کندی رضی اللہ تعالیٰ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ تعالیٰ علیہ وسلم نے ارشاد فرمایا: خبردار! بیشک مجھے قرآن کریم دیا گیا اور اسکے مثل بھی (یعنی حدیث شریف)خبردار! قریب ہے کہ ایک پیٹ بھرا شخص اپنی مسہری پر تکیہ لگا کر کہے: صرف قرآن کو تھام لو، اس میں جو حلال پائو اسے حلال جانو اور جو حرام پائو اسے حرام سمجھو، حالانکہ رسول اللہ صلی اللہ تعالیٰ علیہ وسلم کا حرام فرمایا ہوا ویسا ہی حرام ہے جیسا اللہ تعالیٰ کا حرام فرمایا ہوا،دیکھو ! نہ تمہارے لئے پالتو گدھا حلال ہے اور نہ کیلے والا درندہ جانور، اور نہ ذمی کافر کی گمشد ہ چیز ۔ ہاں جب اس چیز کا مالک اس سے لا پرواہ ہوجائے ،او ر سنو! جو کسی کے پاس مہمان بن کر جائے تو ان پر اسکی مہمانی لازم ہے ۔ اگر مہمانداری نہ کریں تو وہ اپنی مہمانی کی مقدار ان سے وصول کرے ۔۱۲م

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

۵۲۔ السنن لابی داؤد ، السنۃ ، ۲/۶۳۲ ٭ المسند لاحمد بن حنبل ، ۴/۱۳۱

التمہید لابن عبد البر ، ۱/۱۵۰ ٭ الحاوی للفتاوی للسیوطی، ۱/۴۷۱

الفقیہ و المتفقہ للخطیب، ۱/۸۹ ٭ الشریعۃ للآجری، ۱/۵۱