أَعـوذُ بِاللهِ مِنَ الشَّيْـطانِ الرَّجيـم

بِسْمِ اللّٰهِ الرَّحْمٰنِ الرَّحِيْمِ

وَقَدۡ مَكَرَ الَّذِيۡنَ مِنۡ قَبۡلِهِمۡ فَلِلّٰهِ الۡمَكۡرُ جَمِيۡعًا‌ؕ يَعۡلَمُ مَا تَكۡسِبُ كُلُّ نَفۡسٍؕ وَسَيَـعۡلَمُ الۡـكُفّٰرُ لِمَنۡ عُقۡبَى الدَّارِ‏ ۞

ترجمہ:

اور بیشک ان سے پہلے لوگوں نے سازش کی تھی سو تمام خفیہ تدبیروں کا اللہ ہی مالک ہے  وہ ہر شخص کو کارروائی کو جانتا ہے، اور عنقریب کافروں کو معلوم ہوجائے گا کہ نیک انجام کا گھر کس کے لیے ہے۔

تفسیر:

اللہ تعالیٰ کا ارشاد ہے اور بیشک ان سے پہلے لوگوں نے سازش کی تھی سو تمام خفیہ تدبیروں کا اللہ تعالیٰ ہی مالک ہے وہ ہر شخص کی کاروائی جانتا ہے اور عنقریب کافروں کو معلوم ہوجائے گا کہ نیک انجام کا گھر کس کے لیے ہے، (الرعد : 42) 

یعنی اس سے پہلی امتوں کے کافروں نے بھی اپنے نبیوں اور رسولوں کے خلاف سازشیں کی تھیں، اور اللہ تعالیٰ کو ہر ایک کی سازش کا علم ہوتا ہے، جبن کوئی سازش کرتا ہے تو اس کے نتیجہ میں ہونے والی کا روائی کو بھی وہی پیدا کرتا ہے، کیونکہ ہر چیز کا وہی خالق ہے، ، اور آخرت میں اللہ تعالیٰ ان کو ان کی ان سازشوں کی سزا دے گا، اور عنقریب کافروں کو معلوم ہوجائے گا کہ آخرت میں اچھا گھر اور ثواب کس کو ملے گا۔

تبیان القرآن – سورۃ نمبر 13 الرعد آیت نمبر 42