حدیث نمبر199

روایت ہے حضرت علی سے فرماتے ہیں میں نے رسول اﷲ صلی اللہ علیہ وسلم کو اس منبر کے تختوں پر فرماتے سنا کہ جو ہر نماز کے بعد آیت الکرسی پڑھے تو اسے موت کے سوا کوئی چیز جنت کے داخلے سے نہ روکے گی ۱؎ اور جو بستر پر لیٹتے وقت اسے پڑھ لے تو اﷲ اس کے گھر اور اس کے پڑوسی کے گھر آس پاس کے گھر والوں پر امن دے گا ۲؎(بیہقی،شعب الایمان)فرمایا اس کی اسناد ضعیف ہے ۳؎

شرح

۱؎ یعنی وہ مرتے ہی جنت میں جائے گا قیامت سے پہلے روحانی طور پر اور بعد قیامت جسمانی طور پربھی لہذا اس حدیث پر یہ اعتراض نہیں کہ قیامت سے پہلے جنت میں داخلہ کیسا۔خیال رہے کہ عام مسلمین کی قبروں میں جنت کی ہوا اور خوشبو آتی ہے یہ خود وہاں نہیں پہنچتے نہ جسمًا نہ روحًا جنت میں پہنچ جاتے ہیں جیسے شہدا اوریہ لوگ۔

۲؎ یعنی اس کی برکت سے سارے محلے میں چوری،آگ ،لگنے،مکان گرجانے بلکہ ساری ناگہانی آفتوں سے صبح تک امن رہے گی یہ عمل بہت مجرب ہے۔

۳؎ کوئی حر ج نہیں کیونکہ فضائل اعمال میں حدیث ضعیف معتبر ہے،نیز اس کا اگلہ حصہ حصن حصین شریف نے بروایت نسائی ابن حبان،ابن السنی ابو امامہ سے نقل کیا،نیز طبرانی وغیرہم نے آیت الکرسی کے بڑے فضائل بیان کیے وہ تمام احادیث اس کی مؤید ہیں،نیز تمام علماء،اولیاءاور عامۃ المسلمین اس پر عامل رہے اور ہیں اورعملِ امت سے حدیث ضعیف قوی ہوجاتی ہے۔