۶۴۔ عن عبد اللہ بن عباس رضی اللہ تعالیٰ عنہما قال : قال رسول اللہ صلی اللہ تعالیٰ علیہ وسلم: مَنْ تَمَسَّکَ بِسُنَّتِی عِنْدَ فَسَادِ اُمَّتِی فَلہٗ أجْرُ مِائۃِ شَہِیْدٍ ۔

حضرت عبداللہ بن عباس رضی اللہ تعالیٰ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ تعالیٰ علیہ وسلم نے ارشاد فرمایا :جو فساد امت کے وقت میری سنت مضبوط تھامے اسے سو شہیدوںکا ثواب ملے۔ فتاوی رضویہ ۲/۴۹۳

]۶[ امام احمد رضا محدث بریلوی قدس سرہ فرماتے ہیں

ظاہر ہے کہ زندہ وہی سنت کی جائے گی جو مردہ ہوگئی ہو، اور سنت مردہ جبھی ہوگی کہ اسکے خلاف رواج پڑ جائے ۔احیاء سنت علماء کا تو خاص فرض منصبی ہے اور جس مسلمان سے ممکن ہو اسکے لئے حکم عام ہے ۔ ہر شہر کے مسلمانوں کو چاہیئے کہ اپنے شہر یا کم از کم اپنی مساجد میں اس سنت (اذان بیرون مسجد )کو زندہ کریں اور سو سو شہیدوں کا ثواب لیں ۔اس پر یہ اعتراض نہیں ہوسکتا کہ کیا تم سے پہلے عالم نہ تھے۔یوںہو تو کوئی سنت زندہ ہی نہ کرسکیںگے۔ امیر المؤمنین حضرت عمر بن عبد العزیز رضی اللہ تعالیٰ عنہ نے کنتی سنتیں زندہ فرمائیں ۔ اس پر انکی مدح ہوئی نہ کہ الٹا اعتراض ۔ کہ تم سے پہلے تو صحابہ و تابعین تھے۔ رضی اللہ تعالیٰ عنہم۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

۶۴۔ الترغیب و الترہیب للمنذری، ۱/۸۰ ٭ الجامع الصغیر للسیوطی، ۲/۵۲۲