(۵) اہل سنت حق پر ہیں

۶۶۔ عن عبد اللہ بن عمر و رضی اللہ تعالیٰ عنہ قال: قال رسول اللہ صلیاللہ تعالیٰ علیہ وسلم : سَیَأتِی عَلیٰ اُمَّتِی مَا أتٰی عَلیٰ بَنِی اِسْرَائِیْلَ مِثْلاً بِمِثْلِ حَذْوَ النَّعْلِ بِالنَّعْلِ ، وَ اِنَّہُمْ تَفَرَّقُوْا عَلیٰ اِثْنَیْنِ وَسَبْعِیْنَ مِلَّۃً، کُلُّہَا فِی النَّارِ غَیْرُ وَاحِدَۃٍ ، فَقِیْلَ : یَا رَسُولَ اللّٰہِ!وَ مَا تِلْکَ الْوَاحِدَۃُ ، قَالَ : مَا نَحْنُ عَلَیْہِ الْیَوْمَ وَ أصْحَابِی ۔

حضرت عبداللہ بن عمرو رضی اللہ تعالیٰ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ تعالیٰ علیہ وسلم نے ارشاد فرمایا :میری امت کے عنقریب وہی حالات ہونگے جو بنی اسرائیل کے گذرے۔ وہ تو بہتر جماعتوں میں تقسیم ہوگئے تھے اور عنقریب میری امت تہتر فرقوں میں بٹ جائے گی، سب جہنمی ہوںگے ایک کے سوا،عرض کیا گیا : یا رسول اللہ!وہ ایک فرقہ کون ہوگا ؟ فرمایا:جس طریقے پر آج میں اور میرے صحابہ چل رہے ہیں وہ اسی پر گامزن ہوگا۔۱۲م

]۷[ امام احمد رضا محدث بریلوی قدس سرہ فرماتے ہیں

اس پہچان کی رو سے بھی غیر مقلدین اہل حق سے نہیں کہ اجماع ،قیاس اور تقلید کا اثبات جو طریقہ صحابہ کرام کا تھا یہ اس سے منکر ہیں۔ اظہار الحق الجلی ص ۴

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

۶۶۔ تاریخ دمشق لابن عساکر ، ۴/۱۸۱ ٭ کنز العمال للمتقی، ۱۰۵۷ ، ۱/۲۱۰

المسند لاحمد بن حنبل ، ۲/۳۳۲ ٭ تاریخ بغداد للخطیب، ۱۳/۳۱۰

مجمع الزوائد للہیثمی، ۱/۱۸۹ ٭ الفوائد المجموعۃ للشوکانی، ۵۰۲

اتحاف السادۃ للزبیدی، ۸/۱۴۰ ٭ الاسرار المرفوعۃ للقاری، ۱۶۱

تذکرۃ الموضوعات للفتنی، ۱۵ ٭ اللآلی المصنوعۃ للسیوطی، ۱/۱۲۸

المستدر للحاکم ، ۴/۴۳۰ ٭ التفسیر لابن کثیر ، ۴/۲۹۱

مسند الربیع بن حبیب، ۱/۱۳ ٭ شرف اصحاب الحدیث للخطیب، ۴۰