فرشتوں کا تعجب

حضرت انس رضی اللہ عنہ کا بیان ہے کہ رسول اللہﷺ  نے فرمایاکہ جب اللہ تعالیٰ نے زمین کو پیدا فرمایا تو وہ ہلنے لگی اللہ تعالیٰ نے پہاڑوں کو پیدا فرمایا اور زمین کو پہاڑوں کے سہارے پر ٹھہرادیا یہ دیکھ کر فرشتوں کو ان کی طاقت پر بڑا تعجب ہوا اور انہوں نے عرض کیا کہ اے پروردگار کیا تیری مخلوق میں پہاڑوں سے بھی بڑھ کر طاقتور کوئی چیز ہے ؟ اللہ تعالیٰ نے ارشاد فرمایا کہ ہاں لوہا۔ فرشتوں نے عرض کیا کہ تیری مخلوق میں لوہے سے بھی بڑھ کر طاقتور کوئی چیز ہے ؟ تو فرما یا ہاں آگ ہے فرشتوں نے پوچھا کیا آگ سے زیادہ طاقتور کوئی مخلوق ہے ؟ اللہ تعالیٰ نے فرمایا ہاں پانی ہے پھر فرشتوں نے عرض کیا کہ کیا تیری مخلوق میں پانی سے زیادہ طاقتور کوئی چیز ہے؟ تو ارشاد ہوا کہ ہاں ہَوا ہے یہ سن کر فرشتوں نے سوال کیا کہ کیا تیری مخلوق میں ہوا سے بھی بڑھ کر کوئی چیز طاقتور ہے ؟ توجواب ملا کہ ہاں ابن آدم علیہ السلام کہ وہ اپنے داہنے ہاتھ سے صدقہ دے اور بائیںہاتھ سے چھپائے۔ (مشکوٰۃ)

مطلب یہ ہے کہ صدقہ اس قدر چھپا کر دے کہ دائیں ہاتھ سے صدقہ کرے تو بائیں کو خبر نہ ہو۔ اس طرح صدقہ کرنا، پہاڑ، لوہا، آگ، ہوا، پانی اور تمام چیزوں سے بڑھ کر طاقتور ہے۔

میرے پیارے آقا ﷺ کے پیارے دیوانو ! آج خود نمائی کا دَور دورہ ہے۔ لوگ کوئی بھی نیکی چھپانا نہیں چاہتے تو حضورﷺکے فرمان کی روشنی میں سب سے زیادہ طاقتور چیز وہ صدقہ ہے جوچھپا کر دیا جائے۔ اللہ عز و جل ہم سب کو اخلاص کے ساتھ مخلوق کی خدمت کرنے کی توفیق عطا فرمائے۔ آمِیْن بِجَاہِ النَّبِیِّ الْکَرِیْمِ عَلَیْہِ اَفْضَلُ الصَّلٰوۃِ وَ التَّسْلِیْمِ۔