أَعـوذُ بِاللهِ مِنَ الشَّيْـطانِ الرَّجيـم

بِسْمِ اللّٰهِ الرَّحْمٰنِ الرَّحِيْمِ

اِنَّمَا حَرَّمَ عَلَيۡكُمُ الۡمَيۡتَةَ وَ الدَّمَ وَلَحۡمَ الۡخِنۡزِيۡرِ وَمَاۤ اُهِلَّ لِغَيۡرِ اللّٰهِ بِهٖ‌ۚ فَمَنِ اضۡطُرَّ غَيۡرَ بَاغٍ وَّلَا عَادٍ فَاِنَّ اللّٰهَ غَفُوۡرٌ رَّحِيۡمٌ ۞

ترجمہ:

تم پر صرف (یہ) چیزیں حرام کی ہیں مردار اور (بہتا ہوا) خون، اور خنزیر کا گوشت، اور جس (جانور) پر ذبح کے وقت غیراللہ کا نام پکارا گیا، پس جو شخص مجبور ہوجائے وہ سرکشی کرنے و الا نہ ہو اور نہ حد سے تجاوز کرنے والا تو بیشک اللہ بہت بخشنے والا، بےحد رحم فرمانے والا ہے۔

تفسیر:

اللہ تعالیٰ کا ارشاد ہے : تم پر صرف (یہ) چیزیں حرام کی ہیں مردار اور (بہتا ہوا) خون، اور خنزیر کا گوشت، اور جس (جانور) پر ذبح کے وقت غیر اللہ کا نام پکارا گیا، پس جو شخص مجبور ہوجائے وہ سرکشی کرنے و الا نہ ہو اور نہ حد سے تجاوز کرنے والا تو بیشک اللہ بہت بخشنے والا، بےحد رحم فرمانے والا ہے۔ (النحل : ١١٥)

اللہ تعالیٰ نے ان چار چیزوں کی حرمت دو مدنی سورتوں اور دو مکی سورتوں میں بیان فرمائی ہے اور مدنی سورتیں یہ ہیں :البقرہ : ١٧٣، اور المائدہ : ٣، اور مکی سورتیں یہ ہیں :الانعام : ١٤٥، اور النحل : ۱۱۵۔ اس سے معلوم ہوا کہ ان چیزوں کا حرام ہونا نبوت اور رسالت کے پورے دور کو محیط ہے اور یہ چیزیں کسی وقت بھی حلال نہیں تھیں۔ ہم نے ان کی مکمل تفسیر البقرہ اور المائدہ میں بیان کردی ہے۔

تبیان القرآن – سورۃ نمبر 16 النحل آیت نمبر 115