گلے کا اژدہا

حضرت عبداللہ بن مسعود رضی اللہ عنہما سے روایت ہے کہ رسول اللہ ﷺ نے ارشاد فرمایا جو شخص اپنے مال کی زکوٰۃ نہ دے گا وہ مال قیامت کے دن گنجے اژدہے کی شکل بنے گا اور اس کے گلے میں طوق بن کر پڑے گا پھر حضور ﷺ نے یہ آیت تلاوت فرمائی’’ وَلَا یَحْسَبَنَّ الَّذِیْنَ یَبْخَلُوْنَ بِمَا آتَاہُمُ اللّٰہُ مِنْ فَضْلِہٖ‘‘ (ابن ماجہ شریف)

حضرت ثوبان رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللہ علیہ السلام نے ارشاد فرمایا جو بندہ اپنے مال کی زکوٰۃ نکالے بغیر مر گیاقیامت کے دن وہ مال گنجے اژدہے کی شکل میں ہوگا جس کے دو پھن ہوں گے وہ اس کے پیچھے دوڑے گا وہ شخص کہے گا خرابی ہو تیرے لئے تو کون ہے ؟ وہ کہے گا میں تیرا وہی خزانہ ہوں جسے تونے بغیر زکوۃ ادا کئے دنیا میں چھوڑآیا تھا، پھر اس کے پیچھے دوڑتا رہے گا یہاں تک کہ وہ مجبور ہو کر اس کے منہ میں اپنا ہاتھ دیدے گا وہ اس کو چبائے گا یہاں تک کہ پورا جسم چبا جائے گا۔ (کنز العمال )

میرے پیارے آقاﷺ کے پیارے دیوانو ! جس مال کا بندہ زکوٰۃ نکالے بغیرمر جاتا ہے، تو رحمت عالم ﷺ کے فرمان کی روشنی میں وہ مال قیامت کے دن گنجے سانپ کی شکل میں اس شخص کے پیچھے دوڑے گا۔ اللہ اکبر!دنیا میں ہمارے جمع کئے ہوئے مال سے دوسرے لوگ فائدہ اٹھائیں گے اور قیامت کے دن جس کا مال تھا وہ سانپ کے عذاب کا مستحق ہو گا۔ اللہ عز و جل ایسا مال دے جس کی ہم صحیح طور پر زکوٰۃ ادا کر سکیں۔

آمِیْن بِجَاہِ النَّبِیِّ الْکَرِیْمِ عَلَیْہِ اَفْضَلُ الصَّلٰوۃِ وَ التَّسْلِیْمِ۔