۶۔ شرک و کفر

(۱) بت پرستی کی ابتداء کس طرح ہوئی

۸۲ ۔ عن عبد اللہ بن عباس رضی اللہ تعالیٰ عنہما قال ـ صَارَتِ الْأوْثَانُ الَّتِی کَانَتْ فِی قَوْمِ نُوْحٍ فِی الْعَرَبِ بَعْدُ ، أمَّا وَدٌ کَانَتْ لَکَلْبٍ بِدَوْمَۃِ الْجَنْدَلِ ، وَ اَمَّا سُوَاعٌ کَانَتْ لِہُذَیْلٍ ، وَ اَمَّا یَغُوْثُ فَکَانَتْ لِمُرَادٍ، ثُمَّ لِبَنِی غَطِیْفٍ بِالْجَوْفِ عِنْدَ سَبَا،وَ اَمَّا یَعُوْقُ فَکَانَتْ لِہَمْدَان، وَ اَمَّا نَسْرٌفَکَانَتْ لِحَمِیْرٍ لاِٰلِ ذِی الْکِلَاعِِ ، وَ نَسْراً أسْمَائُ رِجَالٍ صَالِحِیْنَ مِنْ قَوْمِ نُوْحٍ ، فَلَمَّا ہَلَکُوْا اَوْحَی الشَّیْطَانُ اِلیٰ قَوْمِہِمْ اَ نْ اَنْصِبُوْا اِلیٰ مَجَالِسِہِمُ الَّتِی کَانُوا یَجْلِسُونْ أنْصَابَا وَ سَمَّوْہَا بِأسْمَائِ ہِمْ فَفَعْلُوْا فَلَمْ تُعْبَدْ حَتّی اِذَا ہَلَکَ اُوْلٓئِکَ وَ تَنَحَّ الْعِلْمُ عُبِدَتْ ۔ اعالی الافادۃ ص ۱۳

حضرت عبداللہ بن عباس رضی اللہ تعالیٰ عنہما سے روایت ہے کہ حضرت نوح علیہ السلام کی قوم میں جو بت پوجے جاتے تھے وہی اہل عرب نے بعد میں اپنے معبود بنالئے ، ود، بنی کلب کا بت تھا جو دومۃ الجندل کے مقام پر رکھا ہوا تھا ، سواع، بنو ہزیل کا بت تھا ، یغوث بنومراد کا بت تھا ، پھر بنوغطیف نے اسکو اپنا بنالیا جو سبا کے پاس جو ف میں تھا۔ یعوق ہمدان کا ،اور نسر ، ذو الکلاع کی آل حمیر کا بت تھا ۔ یہ حضرت نوح علیہ السلام کی قو م کے نیک لوگوں کے نام ہیں ۔جب و ہ وفات پاگئے تو شیطان نے انکی قوم کے دلوں میں یہ بات ڈالی کہ جن مقامات پر وہ اللہ والے بیٹھا کرتے تھے وہاں انکے مجسمے بنا کر رکھ دو ۔ اور ان بتوں کے نام بھی ان نیکوں کے نام پر رکھ دو ۔ لوگوں نے عقیدت کی بنیاد پر ایسا کر دیا لیکن انکو وہ پوجتے نہیں تھےجب وہ لوگ دنیا سے چلے گئے اور علم بھی کم ہوگیا تو انکی پوجا ہونے لگی ۔ ۱۲م

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

۸۳۔
الجامع الصحیح البخاری التفسر 732/2