ہندوستان میں اسلام کردار سے آیا

ھندوستان اور اسکے گرد و نواح میں اسلام کا جھنڈا لہرانے میں،اور صدیوں کے پورانے کفرستان میں اسلام کے علم کو بلند کرنے میں، علماء اولیا اور مبلغین اسلام کے لٹریچر کا عمل دخل نہ تھا اس لئے کہ ھندوستان بہت بڑا ملک اور اس میں کئی طرح کی زبانیں بولی جاتی تھیں،آج کی مادی ترقی کے دور میں وسائل کی فراوانی کے باوجود ہر زبان میں کتابیں منتقل نہ کی جا سکیں تو اس دور میں اسکا خیال بھی کیسے کیا جاسکتا ہے ؟ ان داعیان اسلام کو زبانیں آتی تھیں یہ بھی سوالیہ نشان ہے،بلکہ وہ اسلام کی گران قدر دولت اپنے کردار کے ساتھ لیکر آئے تھے،انکے اخلاق انکی سیرت اور انکے طور طریقوں سے،اور ان اعمال صالحہ کی برکتوں سے ملنے والی کرامتوں سے انہوں نے عملی اسلام پنہچایا،اور لاکھوں کی تعداد میں لوگ مسلمان ہو گئے،آج وسائل ہیں تو شاید کوئی مسلمان ہوتا ہے وہاں کردار تھا لاکھوں مسلمان ہوئے یہ فرق ہے تعلیمات و عمل کا،الحاصل انکا سراپا وجود ہی اسلام کی دعوت بنا ہوا تھا،جو زبان نہ جانتا ان کے کردار کو دیکھ کر اسلام جان لیتا تھا